--> Piya Main Teri By Husn E Kanwal Episode 1 | Urdu Novel Links

Piya Main Teri By Husn E Kanwal Episode 1

 Piya Main Teri By Husn E Kanwal Episode 1 پیا میں تیری حُسنِ کنول قسط نمبر 1   ” نجمہ بنت عبدالرحمان ملک آپ کو محیب ولد اجلال ملک کے نکاح م...

 Piya Main Teri By Husn E Kanwal Episode 1



پیا میں تیری

حُسنِ کنول

قسط نمبر 1

 

نجمہ بنت عبدالرحمان ملک آپ کو محیب ولد اجلال ملک کے نکاح میں ۔۔۔۔۔۔۔۔“مولوی صاحب کے اتنے الفاظ سننے کے بعد نجمہ کا ذہن مفلوج ہوگیا تھا۔۔۔۔اسے سمجھ ہی نہیں آرہا تھا۔۔۔

کیسے صرف ایک ہفتے میں اس کی زندگی الٹ پلٹ ہوگٸ؟؟۔۔۔

کیسے اس کے سارے خواب چکنا چور ہوگٸے؟؟۔۔۔۔

کیسے وہ ان ظالموں میں پھنس گٸ؟؟۔۔۔۔

اس کی آنکھیں سرخ انگاروں کی مانند لال ہورہی تھیں۔۔۔۔جن سے موتی مسلسل بہے جارہے تھے۔۔۔۔مگر اس کی ماں کے سوا کوٸی نہیں تھا جو اس کے آنسو صاف کرتا ۔۔۔۔وہ بھی مجبور کھڑی تھیں۔۔۔۔

اس کی زندگی کو تباہ ہوتے دیکھ رہی تھیں۔۔۔۔وہ مجبور خاتون اور کر بھی کیا سکتی تھیں۔۔۔

چلو دولہن صاحبہ۔۔۔۔“مولوی صاحب اور چند دیگر مہمانوں کے جانے کے بعد محیب نے سب گھر والوں کے سامنے اس کا ہاتھ تھامتے ہوۓ حاکمانہ انداز میں کہا۔۔۔

یہ الفاظ سنتے ہی وہ جو بت بنے بیٹھی تھی ۔۔۔۔پوری جان سے کانپ اٹھی۔۔۔۔

میں تمھارے ساتھ نہیں جانے والی ۔۔۔چھوڑو میرا ہاتھ۔۔۔“وہ نازک صفت پوری طاقت سے اس ستم گر سے اپنا ہاتھ چھڑوانے کی کوشش کرنٕے لگی۔۔۔۔

جانا تو تمھیں پڑۓ گا۔۔۔۔“قطعی انداز میں بھرم سے کہتے ہوۓ۔۔۔۔اس نے نجمہ کا ہاتھ کھینچنا شروع کردیا۔۔۔۔

مام۔۔۔۔بچاٸیں مجھے۔۔۔۔مجھے نہیں جانا اس گھٹیا انسان کے ساتھ۔۔۔مام۔۔۔۔۔“اس کی چیخوں سے پورا لاونج گونج رہا تھا۔۔۔۔

جانا تو پڑۓ گا ۔۔۔کیونکے اب میں تمھارا ہسبینڈ ہوں۔۔۔“وہ فاتحانہ مسکراہٹ چہرے پر سجاۓ گویا ہوا۔۔۔

محیب کیا مزاق ہے یہ؟؟۔۔۔۔تمھیں اچھی طرح علم ہے یہ شادی اِن مقاصد کے لیے نہیں ہوٸی۔۔۔میں اس طواٸف کی بیٹی کو کبھی تمھارے کمرے کی زینت بنتے نہیں دیکھ سکتی۔۔۔۔“مبشرہ بیگم نجمہ پر حقارت بھری نظر ڈالتے ہوۓ اپنے بیٹے سے مخاطب ہوکر ۔۔قطعی انداز میں کہنے لگیں۔۔۔۔

مام یہ باتیں بعد میں کر لیں گے۔۔۔ابھی مجھے میرے کمرے میں جانا ہے۔۔۔“یہ پہلی بار تھا جب محیب مبشرہ بیگم کی کسی بات پر لاپرواہی کا مظاہرہ کررہا تھا۔۔۔۔

اس کا جواب مبشرہ بیگم کو سخت حیرت میں ڈال گیا تھا۔۔۔۔۔۔

محیب بیٹا۔۔۔۔تمھاری بیوی کا حق ہے یہ تو۔۔۔تم یہ حق اِسے کیسے دے سکتے ہو؟؟۔۔۔۔چھوڑ دو اس کا ہاتھ۔۔۔۔تمھارے کمرے کی زینت بننے کے قابل نہیں ہے یہ۔۔۔۔اسے اتنا بڑا درجہ نہ دو۔۔۔۔“دادو اب مزید اپنے جان سے پیارے پوتے کے ہاتھ میں نجمہ کا ہاتھ برداشت نہیں کرپارہی تھیں۔۔۔وہ نجمہ اور اسکا ہاتھ جدا کرنے کی نیت سے آگے بڑھتے ہوۓ بولیں۔۔۔۔

دادو یہ شادی آپ ہی لوگوں نے کرواٸی ہے میری۔۔۔“وہ اپنا غصہ ضبط کر۔۔۔آواز کو باقدرے نارمل رکھنے کی کوشش کرتے ہوۓ گویا ہوا۔۔۔۔

ڈیڈ پلیز سمجھاٸیں ان سب کو۔۔۔۔۔آپ بخوبی جانتے ہیں مجھے یہ خواہمخواہ کے تماشے پسند نہیں ہیں۔۔۔۔“اس کی آواز دھیمی تھی مگر لہجہ برف سے زیادہ سرد۔۔۔۔۔

محیب اجلال ملک اپنے فیصلوں میں کسی کا دخل برداشت نہیں کرتا۔۔۔۔“وہ ایک نگاہ لاونچ میں موجود تمام لوگوں پر ڈالتے ہوۓ۔۔۔سخت لہجے میں اعلانیہ کہ کر۔۔۔نجمہ کا نازک ہاتھ پکڑ کر کھینچتے ہوۓ سیڑھیوں کی جانب بڑھنے لگا۔۔۔۔

چھوڑو مجھے ۔۔۔۔۔۔۔میں نے کہا چھوڑو۔۔۔۔۔مام بچاٸیں۔۔۔۔“وہ اپنی پوری جان لگاکر اس ظالم کی گرفت سے اپنا ہاتھ چھڑانے کی کوشش کررہی تھی۔۔۔۔

اس کے ہاتھوں کی کچھ لال چوڑیاں اس احتجاج میں ٹوٹ کر زمین پر بکھر رہی تھیں۔۔۔تو کچھ اس کے خوبصورت ہاتھوں کو زخمی کررہی تھیں۔۔۔۔

بہت ہوگیا۔۔۔“وہ غصے سے جزبز ہوکر کہتا ہوا رکا۔۔۔۔

اگلے ہی لمحے اسنے جھک کر نجمہ کو اپنے کندھے پر بوری کی طرح اٹھالیا۔۔۔۔

اس بےبس لڑکی کی چیخیں پورے گھر میں گونج رہی تھیں۔۔۔مگر اس کی مدد کرنے والا کوٸی نہ تھا۔۔۔۔۔

*****--#Husny_Kanwal----*****

ایک ہفتہ پہلے:-

ایک ہفتے کی تو بات ہے۔۔۔۔پھر میں واپس آجاٶں گی۔۔۔پھر شادی کی ساری شاپنگ ایک ساتھ کریں گے۔۔۔۔“نجمہ نے مسکراتے ہوۓ زارون کو دیکھ کہا۔۔۔۔

یار۔۔۔مجھے ابھی بھی تمھارا وہاں اکیلے جانا ٹھیک نہیں لگ رہا ۔۔۔۔“اس خوبرو نوجوان کے چہرے پر پریشانی و خوف کے اثار نمایا تھے۔۔۔۔۔اس کے لہجے میں فکر کا عنصر جھلک رہا تھا۔۔۔۔

وہ دونوں ہاتھ سینے پر باندھے۔۔دیوار سے ٹیک لگاٸے۔۔۔۔ نجمہ کو سوٹ کیس تیار کرتا ہوا دیکھ رہا تھا۔۔۔

او۔ہو۔۔۔اتنا پریشان کیوں ہورہے ہو؟؟۔۔۔۔مام کی کال آٸی تھی دو ہفتوں پہلے۔۔۔۔بہت مس کررہی ہیں مجھے۔۔۔۔۔ساتھ ساتھ بہت اصرار کررہی تھیں کے میں پاکستان واپس آٶں۔۔۔کم از کم اپنے کزن کی شادی میں شرکت ہی کرلوں۔۔۔ایک وقت میں نے انھیں ٹالنے کی سوچا بھی۔۔۔اور ٹال بھی دیا تھا۔۔۔مگر پھر کل رات بڑے ابو کی کال آٸی۔۔۔انھوں نے بھی بہت اصرار کیا۔۔۔۔۔۔میں تو ابھی تک اسی شاکڈ میں ہوں کے بڑے ابو نے خود مجھ سے کہا کے بیٹا اپنے بھاٸی کی شادی میں شرکت نہیں کرٶ گی؟؟؟۔۔۔۔یقین مانو اس لمحے مجھے لگا میں رو دوں گی۔۔۔۔انھوں نے زندگی میں پہلی بار مجھ سے اتنی اچھی طرح بات کی ہے۔۔۔۔میں انھیں منع نہیں کرسکی۔۔۔۔۔۔ویسے بھی اب بہت سال گزر چکے ہیں۔۔۔“نجمہ نے اسکی جانب دیکھتے ہوۓ۔۔۔مسکرا کر کہا۔۔۔۔

وہ دل کی صاف تھی۔۔۔شاید اس لیے اسے دوسری جانب بھی سب اچھا ہی نظر آرہا تھا۔۔۔۔

مجھے پتا نہیں کیوں ۔۔۔۔ٹھیک نہیں لگ رہا تمھارا وہاں اکیلے جانا۔۔۔میری مانو۔۔۔مجھے ساتھ لے چلو۔۔“وہ کافی زور دیتے ہوۓ کہنے لگا۔۔۔۔

نہیں نہیں۔۔۔۔تمھیں وہاں اپنے ساتھ لے جانا ابھی ٹھیک نہیں ہوگا۔۔۔۔میں نے مام سے ابھی تک تمھارے بارے میں بات نہیں کی ہے۔۔۔۔پہلے میں وہاں جاکر حالات کا جاٸزہ لوں گی۔۔۔پھر مام سے بات کرنے کے بعد تمھیں ان سے ملنے کے لٸے کسی ریسٹورنٹ میں بلا لوں گی۔۔۔۔میں نہیں چاہتی تم ملک مینشن آٶ۔۔۔۔“پرانی تلخ یادوں نے جیسے اسے گہر لیا تھا۔۔۔۔وہ آخری جملہ خاصہ مفاہمانہ انداز میں منہ بسورتے ہوۓ بول رہی تھی۔۔۔۔

زارون سمجھتا تھا اسے۔۔۔۔۔اس لیے مزید کوٸی بحث نہ کی۔۔۔۔

ہمم۔۔۔۔ٹھیک ہے۔۔۔میں انتظار کرٶں گا۔۔۔“وہ اداس لہجے میں اثبات میں سر ہلاتے ہوۓ کہنے لگا۔۔۔۔

ویسے ایک ہفتے میں کتنے دن ہوتے ہیں؟؟“وہ بیڈ پر آکر بیٹھتے ہوۓ۔۔۔۔معصومیت چہرے پر سجاۓ ۔۔۔۔نجمہ کو دیکھ استفسار کرنے لگا۔۔۔۔

سات دن۔۔۔“وہ مسکراتے ہوۓ ۔۔۔اس کا اداس چہرہ دیکھ۔۔۔جواب دہ ہوٸی۔۔۔۔۔

سات دن۔۔۔افففف۔۔۔۔میرے اللہ۔۔۔میں کیسے رہوں گا یار ؟؟۔۔۔یہ تو بہت زیادہ ہیں۔۔۔پھر ہماری شادی کی بھی ابھی تیاری نامکمل ہے۔۔۔کیوں ناں تم صرف تین دنوں کے لٸے چلی جاٶ۔۔۔۔“اس کی آنکھوں میں چمک ابھری تھی یہ آٸیڈیا دیتے ہوۓ۔۔۔

زارون ۔۔۔ایک ہفتے کی ہی تو بات ہے۔۔۔دیکھنا یوں گزر جاٸیں گے۔۔۔ویسے بھی تم کون سہ روز میرے اپارٹمنٹ کے چکر لگاتے ہو؟؟۔۔۔۔۔“وہ کپڑے ہینگر سے نکال۔۔۔سوٹ کیس میں سلیقے سے رکھتے ہوۓ۔۔۔اسکی جانب دیکھ کر شکوتاً گویا ہوٸی۔۔۔۔۔

تو کیا؟؟۔۔۔ہر تین چار گھنٹے بعد کال تو کرتا ہو ناں۔۔۔“وہ خاصہ جتاتے ہوۓ جوابِ شکوہ دینے لگا۔۔۔۔

جسے سن۔۔۔ وہ مسکرا دی۔۔۔

اچھا انکل کو یاد سے بتا دینا۔۔۔میں جلدی میں انھیں تو بتانا ہی بھول گٸ۔۔۔۔“نجمہ کو کپڑے نکالتے وقت اچانک زارون کے والد کی یاد آٸی۔۔۔جس پر اسنے تیزی اپنے سامنے موجود خوبرو نوجوان کو دیکھ کہا۔۔۔۔۔

اوکے۔۔۔۔ویسے تمھیں ڈیڈ سے بات کرنی چاہیے تھی ۔۔اتنا بڑا فیصلہ لینے سے پہلے۔۔۔۔۔“وہ آنکھیں چھوٹی کرتے ہوۓ۔۔۔مشورتاً گویا ہوا۔۔۔۔

ہاں۔۔۔پر۔۔۔مجھے یقین ہے انکل مجھے میرے فیصلے خود کرنے دیں گے۔۔۔جیسے آج تک کرنے دیے۔۔۔۔۔وہ مجھے تمھاری طرح روکنے کی کوشش نہیں کریں گے۔۔۔“وہ بڑی بڑی آنکھیں دیکھاتے ہوۓ ۔۔۔۔تیزی سے بولی۔۔۔۔

اچھا بھٸی۔۔۔نہیں کررہا تمھیں روکنے کی کوشش۔۔۔۔مگر پلیز یار۔۔۔مجھ سے وہاں جانے کے بعد مکمل رابطے میں رہنا۔۔۔۔“وہ منتی انداز میں کہنے لگا۔۔۔۔

جس پر وہ مسکراتے ہوۓ اثبات میں سر ہلانے لگی۔۔۔۔”اوکے باس۔۔۔

ہم باس کہاں۔۔۔باس تو آپ ہیں میڈم۔۔۔۔“وہ شکوتاً منہ بسور کر کہنے لگا۔۔۔۔”اگر ہم ہوتے تو اس وقت آپ یہ پیکنگ نہ کررہی ہوتیں۔۔۔

اچھا جانے سے قبل ۔۔۔اپنے ہاتھ کی بریانی ہی کھلا دو۔۔۔۔ایک ہفتے تک ورنہ ترسنا پڑۓ گا مجھ غریب کو۔۔۔۔“وہ بھولا سہ چہرہ بناۓ۔۔۔۔فرماٸش کرنے لگا۔۔۔۔

اب میں جانے کی پیکنگ کرٶں یا تمھارے لیے بریانی بناٶں؟؟“وہ ایک ہاتھ کمر پر ٹکاکر۔۔۔۔منہ بگاڑتے ہوۓ بولی۔۔۔۔

یار بنادو ناں ۔۔۔بہت دل چاہ رہا ہے۔۔۔۔“اس نے لچک دار انداز میں اپنی فرماٸش پر زور دیا۔۔۔۔

اچھا اچھا۔۔۔اب اتنا کیوٹ فیس مت بناٶ۔۔۔بناتی ہوں ابھی۔۔۔“بہت محبت تھی اسے زارون سے۔۔۔اور کیونکر نہ ہوتی۔۔۔۔وہ پوری دنیا میں جازع کے بعد اس کا واحد دوست تھا۔۔۔۔۔

جازع کے بعد ۔۔۔۔ آج تک اس نے ایک ہی دوست بنایا تھا اور وہ تھا زارون۔۔۔۔

اس کا سکھ دکھ کا ساتھی۔۔۔۔

زارون کے سامنے نجمہ کی پوری زندگی کھلی کتاب کی مانند تھی۔۔۔۔شاید یہی سبب تھا کے وہ بالکل فری ہوکر اس سے اپنی ہر بات شیٸر کرلیتی تھی۔۔۔۔

زارون اس کی فیلنگس کو سمجھتا تھا اور یہی بات اسے نجمہ کی زندگی میں اولین درجے پر رکھتی تھی۔۔۔۔۔

****----*****

کیا بریانی بناٸی ہے یار۔۔۔دل چاہ رہا ہے ہاتھ چوم لوں تمھارے۔۔۔۔“وہ پہلا لقمہ کھاتے ہی نجمہ کا ہاتھ پکڑ۔۔۔چومنے کی نیت سے اپنے ہونٹوں کے نزدیک لے جاتے ہوۓ بولا۔۔۔۔

زارون۔۔۔“اس نے احتجاجاً اپنی آنکھیں بڑے کرتے ہوۓ۔۔۔اسے گھورا۔۔۔۔

اُس شرارتی لڑکے کی آنکھوں میں شوخی مچل رہی تھی۔۔۔جسے نجمہ نے پڑھ لیا تھا۔۔۔

اچھا بھٸی ۔۔۔۔“وہ ہاتھ آہستگی سے نیچے کی جانب کرتے ہوۓ۔۔۔منہ بسور کہنے لگا۔۔۔۔

ہاتھ تو چھوڑو۔۔۔“وہ اپنا ہاتھ چھڑانے کی ہلکی سی کوشش کرتے ہوۓ کہنے لگی۔۔۔۔

مجھے بھی کھانا کھانا ہے۔۔۔“زارون نے اسکی بات کو مکمل اگنور کرتے ہوۓ۔۔۔اس کا ہاتھ تھامے رکھا۔۔۔اور دوسرے ہاتھ سے چمچے میں چاول بھر کر منہ میں ڈالے۔۔۔۔۔جس پر نجمہ نرمی سے احتجاجا کہنے لگی۔۔۔۔

تو کھا لو۔۔۔۔میں نے روکا تھوڑی ہے۔۔۔سیدھا ہاتھ فری ہے تمھارا۔۔۔۔“وہ ہاتھ چھوڑنے کا ارادہ نہیں رکھتا تھا۔۔۔۔

شادی کے بعد بھی ایسے ہی ہاتھ پکڑ کر کھانا کھانا۔۔۔۔پھر مانو گی کے محبت کرتے ہو مجھ سے۔۔۔“وہ چیلنج دینے والے انداز میں ۔۔۔۔شرارت بھری نگاہیں اس کے وجود پر ڈالے بولی۔۔۔۔

صرف ہاتھ؟؟۔۔۔۔“وہ ذومعنی انداز میں کہ کر ۔۔اسکے حسین سراپے کو تکنے لگا۔۔۔۔

جس پر وہ جھیپ کر نظریں جھکا گٸ تھی۔۔۔۔

افف۔۔۔ایسے نہ شرمایا کرٶ۔۔۔۔میرے دل پر بجلیاں گراتا ہے تمھارا یوں شرمانا۔۔۔“وہ فدا فدا نظروں سے اسے تکتے ہوۓ کہنے لگا۔۔۔۔

تم کھانا کھاٶ ۔۔۔“اس کے گال گلابی گلابی سے ہوگٸے تھے۔۔۔۔مزید اس کی رومانی نظریں اپنے وجود پر برداشت کرنا اب مشکل ہورہا تھا۔۔۔بڑی ہمت جمع کر۔۔۔۔۔۔شرمیلی سی مسکراہٹ اپنے چہرے پر سجاۓ اسے ٹوکا۔۔۔۔

جس پر وہ مسکراتے ہوۓ ۔۔۔اس دلفریب دلربا کا شرمیلا سراپا اپنی آنکھوں میں بسانے لگا۔۔۔۔

کل اٸیرپورٹ کتنے بجے جاٶ گی۔۔۔مجھے بتا دو ۔۔۔“نجمہ کھانے کا سامان سمیٹ رہی تھی کھڑے ہوکر ۔۔۔۔تو زارون نے پانی کا گلاس منہ سے لگاتے ہوۓ کہا۔۔۔

میں دو بجے تک جاٶں گی۔۔۔مگر تمھیں ضرورت نہیں ہے آفس چھوڑ کر آنے کی۔۔۔میں خود چلی جاٶں گی۔۔۔ویسے بھی اٸیرپورٹ پر محیب ہوگا۔۔۔۔

محیب کا نام سن ۔۔۔زارون پانی پیتے پیتے رکا۔۔۔۔

محیب؟؟۔۔۔۔“اس کے چہرے پر الجھاپن نمایا تھا۔۔۔

ہاں۔۔۔بڑے ابو نے کہا ہے کے محیب کسی اپنے کام کے سلسلے میں کیلفورنیا آیا ہوا ہے۔۔۔۔تو میں اس کے ساتھ ہی واپس پاکستان آجاٶں۔ ۔۔۔۔وہ اٸیرپورٹ پر ملے گا مجھے۔۔۔۔“نجمہ نے لاپرواہی سے برتن دھوتے ہوۓ جواب دیا۔۔۔۔

اتنے مہربان کیوں ہورہے ہیں یہ لوگ ؟؟“زارون فورا ابرو اچکاکر۔۔۔۔مشکوک انداز میں کہنے لگا۔۔۔۔

نجمہ کچن میں کھڑی برتن دھو رہی تھی۔۔۔۔جب زارون اس کے پیچھے آکر کھڑا ہوا۔۔۔۔

وہ کام سے آیا ہوا ہے۔۔۔۔خاص طور پر مجھے لینے نہیں آیا۔۔۔۔تو پھر مہربانی کیسی؟؟“نجمہ نے زارون کی جانب مڑ کر۔۔۔۔ مسکراتے ہوۓ جواب دیا ۔۔۔۔

مگر میں پھر بھی تمھیں اٸیرپورٹ چھوڑنے آٶں گا۔۔۔۔“زارون نے قطعی انداز میں کہا۔۔۔۔۔

کوٸی ضرورت نہیں ہے۔۔۔کہا ناں میں نے۔۔۔۔پاکستان سے واپس آنے کے بعد مجھے بہت ساری شاپنگ کرنی ہے ہماری شادی کی۔۔۔۔۔۔جو میں تمھارے ساتھ کرنا چاہتی ہوں۔۔۔پھر تمھارا وہ سڑیل باس چھٹی نہیں دے گا۔۔۔۔اس لیے ابھی چھٹی لینے کی سوچنا بھی مت۔۔۔۔“وہ حاکمانہ انداز میں اسے دیکھ کہنے لگی۔۔۔۔

جس پر وہ ناچاہتے ہوۓ بھی اثبات میں سر ہلانے لگا۔۔۔۔۔

جاری ہے

 

 





COMMENTS

Name

After Marriage Based,1,Age Difference Based,1,Armed Forces Based,1,Article,7,complete,2,Complete Novel,611,Contract Marriage,1,Doctor’s Based,1,Ebooks,9,Episodic,276,Feudal System Based,1,Forced Marriage Based Novels,4,Funny Romantic Based,1,Gangster Based,2,HeeR Zadi,1,Hero Boss Based,1,Hero Driver Based,1,Hero Police Officer,1,Horror Novel,2,Hostel Based Romantic,1,Isha Gill,1,Khoon Bha Based,2,Poetry,13,Rayeha Maryam,1,Razia Ahmad,1,Revenge Based,1,Romantic Novel,22,Rude Hero Base,3,Second Marriage Based,1,Short Story,68,youtube,30,
ltr
item
Urdu Novel Links: Piya Main Teri By Husn E Kanwal Episode 1
Piya Main Teri By Husn E Kanwal Episode 1
https://blogger.googleusercontent.com/img/b/R29vZ2xl/AVvXsEilt55KH12hnsV9qX4okkpe9sJIDHkDhBakbb605UkAI5pmXKmEbP0Z2S1tWAH9IrxUY8fz8LyCb4rYTsJjr0wGybW6KPJEewri3N9AoLpbXJhaBZJrKrDR-P_fs5MpTP80XPjMWJ1wq_rE6uJ3Qi68Q7baEy-u05sExyJBMKYcYTv-Pwt9wMowWbvO/w400-h275/Piya%20Main%20Teri%20By%20Husn%20E%20Kanwal%20Episode%201.jpg
https://blogger.googleusercontent.com/img/b/R29vZ2xl/AVvXsEilt55KH12hnsV9qX4okkpe9sJIDHkDhBakbb605UkAI5pmXKmEbP0Z2S1tWAH9IrxUY8fz8LyCb4rYTsJjr0wGybW6KPJEewri3N9AoLpbXJhaBZJrKrDR-P_fs5MpTP80XPjMWJ1wq_rE6uJ3Qi68Q7baEy-u05sExyJBMKYcYTv-Pwt9wMowWbvO/s72-w400-c-h275/Piya%20Main%20Teri%20By%20Husn%20E%20Kanwal%20Episode%201.jpg
Urdu Novel Links
https://www.urdunovellinks.com/2022/08/piya-main-teri-by-husn-e-kanwal-episode.html
https://www.urdunovellinks.com/
https://www.urdunovellinks.com/
https://www.urdunovellinks.com/2022/08/piya-main-teri-by-husn-e-kanwal-episode.html
true
392429665364731745
UTF-8
Loaded All Posts Not found any posts VIEW ALL Readmore Reply Cancel reply Delete By Home PAGES POSTS View All RECOMMENDED FOR YOU LABEL ARCHIVE SEARCH ALL POSTS Not found any post match with your request Back Home Sunday Monday Tuesday Wednesday Thursday Friday Saturday Sun Mon Tue Wed Thu Fri Sat January February March April May June July August September October November December Jan Feb Mar Apr May Jun Jul Aug Sep Oct Nov Dec just now 1 minute ago $$1$$ minutes ago 1 hour ago $$1$$ hours ago Yesterday $$1$$ days ago $$1$$ weeks ago more than 5 weeks ago Followers Follow THIS PREMIUM CONTENT IS LOCKED STEP 1: Share to a social network STEP 2: Click the link on your social network Copy All Code Select All Code All codes were copied to your clipboard Can not copy the codes / texts, please press [CTRL]+[C] (or CMD+C with Mac) to copy Table of Content