--> Bakht By Tehniyat Guria Short Story | Urdu Novel Links

Bakht By Tehniyat Guria Short Story

 Bakht By Tehniyat Guria Short Story بخت تہنیت گڑیا   میں سانولی سی لڑکی ہوں میرا بخت مجھ سے روٹھا سا   عورت ہونا اور تھوڑا سا سانولا ہونا۔۔...

 Bakht By Tehniyat Guria Short Story




بخت

تہنیت گڑیا

 

میں سانولی سی لڑکی ہوں

میرا بخت مجھ سے روٹھا سا

 

عورت ہونا اور تھوڑا سا سانولا ہونا۔۔۔۔۔ایک ایسا قہر ہے جس کا کوئی علاج نہیں۔۔۔۔۔۔۔

 

میں سمجھتی تھی محبت کا کوئی رنگ نہیں ہوتا۔۔۔۔مگر یہ تو #کالی # گوری #چٹی #گدلی اور کئی رنگوں کی ہوتی ہے۔۔۔۔۔۔۔

 

مجھے چائے پیتے ہوئے یہی احساس ہوتا تھا کہ چائے کا بس ایک ہی زائقہ ہوتا ہے جو سب کو اچھا لگتا ہے جس کا نشہ سب کو ایک جیسا لگتا ہے

لیکن اس کے بھی کئی رنگ ہوتے ہیں۔۔۔۔۔۔۔

 

تہزیب نے چائے کا کپ ساسر میں رکھتے ہوئے ایک ٹھنڈی سانس بھری۔۔۔۔۔۔

رنگوں پہ آکر بات کیوں رک جاتی ہے۔۔۔۔۔۔ہمارا معاشرہ اتنا سفاک کیوں ہے حیدر۔۔۔۔۔۔۔

مجھے معلوم نہیں تھا کہ کبھی مجھے سانولی رنگت کے ہاتھوں اتنا زچ کیا جائے گا۔۔۔۔۔۔

حیدر خاموشی سے اس کے سانولے سلونے چہرے کو بغوردیکھ رہا تھا

تہزیب۔۔۔۔۔مجھے یہ سانولی رنگت بہت پسند ہے۔۔۔۔باقی لوگوں کی فکر کرنا چھوڑ دو۔۔۔۔۔۔

 

کیسے چھوڑ دوں حیدر۔۔۔۔۔۔۔۔تہزیب کی آواز قدرے اونچی ہو چکی تھی۔۔۔۔۔۔

میں کیسے نظر انداز کر دوں لوگوں کو۔۔۔۔جو دن رات مجھے یہ طعنے دیتے ہیں کہ میرا رنگ کالا ہے۔۔۔۔۔۔

اتنا ہی میرا رنگ چھبتا تھا تو مجھے بیاہ کر اس گھر میں کیوں لائے۔۔۔۔۔۔۔کیوں مجھے بار بار یہ باور کرایا جاتا ہے کہ میں کالی ہوں۔۔۔۔۔کیوں مجھے بات بات پہ زلیل کیا جاتاہے۔۔۔۔۔کیوں۔۔۔۔۔آخر کیوں۔۔۔۔۔۔۔

 

تہزیب کی آواز میں درد بھی شامل ہو چکا تھا

 

اچھا۔۔۔۔مجھے بہت سارے کام ہیں میں چلتا ہوں۔۔۔۔حیدر چائے کا کپ ٹرے میں رکھتا ہوا اٹھ کھڑا ہوا اور دروازے کی جانب چل دیا

 

آج پھر اپ میرے سوالوں کے جواب دئے بغیر جا رہے ہیں۔۔۔۔میری بات مکمل نہیں ہوئی۔۔۔۔اصل میں ۔۔۔۔آپ کچھ کر ہی نہیں سکتے۔۔۔۔نہ ہی آپ کے پاس اس کا کوئی حل ہے۔۔۔۔۔۔

حیدر کو جاتے دیکھ کر وہ بولتی جا رہی تھی جبکہ حیدر کب کا نظروں سے اوجھل ہو چکا تھا۔۔۔۔۔۔۔

 

کیسے چھوڑ دوں اس بات کو۔۔۔۔۔۔۔کیسے ان لوگوں کو نظر انداز کر دوں جوہروقت میرے ارد گرد رہتے ہیں۔۔۔۔زندہ و جاوید۔۔۔۔۔تیز ترین بینائی کے مالک۔۔۔۔جنہیں سیاہ و سفید کا فرق صاف دکھائی دیتا ہے۔۔۔۔۔کیسے نظر انداز کروں۔۔۔۔۔۔۔

وہ چائے کے کپ کو بغور دیکھتی ہوئی سوچوں کے بھنور میں ڈوب چکی تھی۔۔۔۔۔۔۔

 

تہزیب ۔۔۔۔۔۔اوپر والا پورشن تم نے صاف کر دیا؟۔۔۔۔۔اگر نہیں کیا تو جلدی کر آؤ کیونکہ اس کے بعد کھانا بھی بنانا ہے تم نے۔۔۔۔۔جلدی سارے کام کر لیا کرو۔۔۔۔۔۔پُھرتی دکھایا کرو۔۔۔۔۔کتنی بار کہا ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔مجھے بار بار کہنا پڑتا ہے۔۔۔۔۔۔۔۔

 

عائشہ بیگم نے بہو کو تمام کاموں کی لسٹ منہ زبانی تیار کر کے دے دی تھی۔۔۔۔۔۔

 

لیکن امی ۔۔۔۔۔۔مائدہ اپنے کمرے میں آرام کر رہی ہے۔۔۔۔ایک کام اسے بھی سونپ دیں۔۔۔۔۔کھانا ہی وہ بنا لیتی تو کافی تھا۔۔۔۔۔۔وہ دل کی بات زبان پہ لائے بغیر دل ہی دل میں سوچتی رہ گئی۔۔۔۔۔۔۔کیونکہ اگر زبان پہ لاتی تو پچھلی بار کی طرح اسے منہ کی کھانی پڑتی۔۔۔۔۔پچھلی بار جب اس نے مائدہ کا نام لیا تھا تو حیران کن طور پہ عائشہ بیگم نے مائدہ کی جھوٹی تعریفوں کے پل باندھ دئے جیسے وہ مائدہ کی ساس نہیں بلکہ سگی ماں ہوں۔۔۔۔۔۔

 

کیسی ہو مائدہ بیٹی۔۔۔۔۔۔۔۔۔ارے اٹھو مت۔۔۔۔۔۔لیٹی رہو۔۔۔۔۔آرام کرو۔۔۔۔ویسے بھی لیڈی ڈاکٹر نے تمہیں آرام کرنے کا کہا ہے۔۔۔۔۔

ساس کو کمرے میں آتا دیکھ کرمائدہ اٹھنے کی جسارت کر ہی رہی تھی کہ ساس صاحبہ نے اسے اٹھنے سے منع کر دیا۔۔۔۔۔۔۔۔

 

اتنی چھوٹی سی بچی ہے تمہاری۔۔۔۔۔۔اس کو سنبھالنا ہی جوئے شیر لانے کے مترادف ہے۔۔۔۔۔۔تھکاوٹ تو ہونی ہی تھی۔۔۔۔۔۔۔تم نے یقیناً دودھ بھی نہیں پیا ہو گا۔۔۔۔۔لو میں لے کر آتی ہوں۔۔۔۔۔۔۔۔

 

عائشہ بیگم نے مائدہ کی طرف پیار بھری نظروں سے دیکھتے ہوئے اٹھنے کا ارادہ کیا۔۔۔۔۔

 

نہیں ماما جانی۔۔۔۔۔۔۔میں خود ہی دودھ لے آتی ہوں۔۔۔۔۔آپ بیٹھیں ناں۔۔۔۔۔۔۔ویسے بھی تہزیب بھابھی پہلے ہی جلتی رہتی ہیں۔۔۔۔۔۔۔وہ پھر سوچیں گی کہ ساس اس کی اتنی سیوا کرتی ہے۔۔۔۔

مایدہ نے صاف الفاظ میں بھابھی کی کے متعلق بدگمانیاں ساس کے سامنے پیش کر دیں۔۔۔۔۔۔

 

مائدہ کو ساس نے خود پسند کیا تھا۔۔۔۔۔پورے خاندان کو مائدہ بہت پسند تھی۔۔۔۔۔۔۔جب سے مائدہ کو بیاہ کر اس گھر میں لایا گیا تھا تب سے سب عائشہ بیگم کے گن گانے لگے تھے۔۔۔۔۔۔۔

 

مائدہ کے نقوش اتنے اچھے تو نہ تھے مگر رنگ بے تخاشا گورا تھا۔۔۔۔۔۔اس کا یہی گورا رنگ اس کے خوبصورت نصیب بن کے چمک اٹھا تھا۔۔۔۔۔۔۔شوہر کی بے پناہ لاڈلی اور ساس سسر کی شہزادی قرار پائی تھی۔۔۔۔۔۔

 

گورے رنگ کی وجہ سے وہ تخت پہ بٹھا دی گئی۔۔۔۔اسے تمام امور سلطنت تھما دئے گئے۔۔۔۔وہ ملکہ عالیہ قرار پائی اور سانولی رنگت والی شہزادی کو گھر کے کسی کونے میں رہنے کے لئے جگہ دی گئی تھی۔۔۔۔جہاں اسے تمام نوکروں والے کام کاج کی لسٹ تھما دی جاتی تھی۔۔۔۔۔۔

 

ساس صاحبہ مائدہ کو بیڈ سے نیچے بھی نہ اترنے دیتی تھیں۔۔۔۔۔۔پہلے ہی سال خدا نے اسے بیٹی جیسی رحمت سے نواز دیا تھا۔اب مائدہ اور اس کی بیٹی کے ناز نخرے ہر کوئی جی بھر کے اٹھاتا تھا۔۔۔۔۔۔

 

وجہ ۔۔۔اس کا گورا رنگ تھا۔۔۔۔۔۔۔۔

 

یہ گھرانہ پچھلے آٹھ سال سے تہزیب کو اپنے سامنے چلتا پھرتا اور کام کاج کرتے دیکھتا رہا تھا۔۔۔۔اب آٹھ سالوں کے بعد ایک خوبصورت دلنشین گوری چٹی اور حسین بہو مائدہ کی شکل میں ملی تو اس کے ناز نخرے اٹھانا ان کو اپنا اولین فریضہ لگتا تھا۔۔۔۔۔۔

 

وہ اتنی نازک تھی کہ کوئی بھی ہلکا سا کام کر لیتی تو بیمار پڑ جاتی۔۔۔۔جبکہ تہزیب تو مائدہ سے بھی زیادہ نازوں پلی تھی۔۔۔۔۔مگر۔۔۔۔۔اس کا قصور یہ تھا کہ وہ سانولی تھی۔۔۔۔۔۔۔۔خدا نے اسے خوبصورتی کے ساتھ نازک دل بھی دیا تھا۔۔۔۔۔لیکن رنگ سانولا دیا ۔۔۔۔۔جو اس کا سب سے بڑا گناہ بن گیا تھا۔۔۔۔۔۔۔

 

مجھے ماں کہا کرتی تھی۔۔۔۔۔۔تم تو بہت پیاری ہو۔۔۔۔کبھی ماں نے مجھ پہ یہ ظاہر ہی ہونے نہیں دیا کہ میں سانولی لڑکی ہوں۔۔۔۔مجھے دنیا قبول نہیں کرے گی۔۔۔۔۔۔

کالج میں دوستیں کہا کرتیں تھیں ۔۔۔۔۔۔تمہارے چہرے میں بلا کی کشش ہے۔۔۔۔۔۔۔کبھی کسی دوست نے یہ کہا ہی نہیں تھا کہ کالا رنگ بھی بھلا دلنشین ہو سکتا ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔

ہمیشہ میری بیسٹی یہی کہتی کہ۔۔۔۔۔تہزیب ۔۔۔۔سانولے رنگ میں بڑی کشش ہوتی ہے۔۔۔۔اور جو بھی تمہیں دیکھتا ہے ایک بار ڈوب سا جاتا ہے۔۔۔۔۔

شادی کے بعد محسوس ہوا کہ وہ جھوٹ بولتی تھی۔۔۔۔۔۔

اس نے کبھی مجھے باور ہی نہیں کروایا کہ میں سانولی رنگت والی لڑکی بھلاں کب کسی کو بھاسکتی ہوں۔۔۔۔۔پچھلی ساری زندگی میں نے خوش فہمیوں میں ہی گزار دی۔۔۔۔۔۔۔۔

کبھی کسی نے مجھے محسوس ہی نہ ہونے دیا تھا کہ میری رنگت۔۔۔۔۔۔۔اس معاشرے کے لئے قابل قبول نہیں ہے۔۔۔۔۔

 

مجھے تو معلوم ہی نہ تھا کہ شادی کے بعد مجھے یہ سب باتیں باوور کروائی جائیں گی۔۔۔۔۔۔مجھے اچھی طرح بتایا جائے گا کہ میرا رنگ کالا ہے۔۔۔۔۔سفید رنگ کو پوجنے والی یہ سفید پوش دنیا کالے رنگ کو کب اہمیت دیتی ہے۔۔۔۔۔۔۔

 

تم نے نمک تیز کر دیا۔۔۔۔۔تم نے پچھلی بار بھی کھانے میں نمک تیز کر دیا تھا ۔۔۔۔۔تمہارادھیان کھانا پکانے کی طرف نہیں ہوتا تہزیب ۔۔۔۔۔۔۔۔

عائشہ بیگم نے نہائت شائستگی سے تہزیب کو اس کی غلطی پہ ڈانٹ دیا تھا۔۔۔۔۔۔

 

سوری امی۔۔۔۔۔آئیندہ ایسا نہیں ہو گا۔۔۔۔۔۔۔اچانک خیالوں سے نکل کر اس نے ساس سے معافی مانگی۔۔۔۔۔۔

 

ہوں۔۔۔۔سوری۔۔۔۔۔۔۔تھوڑا بہت کام ایسے کرتی ہے جیسے احسان کر رہی ہے۔۔۔۔۔

بڑبڑاتی ہوئی عائشہ بیگم کچن سے باہر نکل گئیں۔۔۔۔۔۔

 

اوہو۔۔۔۔۔تم کیوں کپڑے دھونے لگی۔۔۔۔کام والی کس لئے لگوائی ہے۔۔۔۔۔اسے کیوں نہیں کہا تم نے۔۔۔۔۔عائشہ بیگم مائدہ کو کپڑے دھوتے دیکھ کر سٹ پتا اٹھیں۔۔۔۔۔۔۔

میری بچی۔۔۔۔دھوپ میں تمہارا سفید رنگ ماند پڑ سکتا ہے۔۔۔۔جب سے تمہاری شادی ہوئی ہے میں نے اسی لئے کام والی لگوا رکھی ہے۔۔۔۔۔۔چھوڑ دو یہ کپڑے ۔۔۔۔۔ساس بدستور اس کے ہاتھ سے کپڑے لیتے ہوئے اسے کپڑے دھونے سے منع کر رہی تھیں۔۔۔۔۔۔

 

ماما جانی۔۔۔۔۔۔عاصم کے سارےکپڑےدھونے والے پڑے ہیں وہ مجھے کہہ رہے تھے کہ کوئی بھی کپڑا صاف نہیں مل رہا۔۔۔۔۔۔۔

کام والی نے تو کل آنا ہے ۔۔۔۔۔میں کل تک ویٹ نہیں کر سکتی۔۔۔۔۔۔۔

مائدہ نے ناز و ادا سے ساس کو جواب دیا۔

 

جس طرح گھر کے سب لوگ اس کے ناز نخرے اٹھاتے تھے۔۔۔۔۔اسی طرح وہ خود بھی ناز نخرے اٹھواتی تھی۔۔۔۔۔۔سفید رنگ کی نازک شہزادی ہر بات کا جواب پھولوں میں پرو کر شائیستگی اور اداؤں سےدیتی تھی۔۔۔۔۔۔

 

اچھا تو۔۔۔۔پھر ایسا کرتے ہیں میں تمہارے ساتھ دھلواتی ہوں۔۔۔۔تم کیسے اتنے سارے کپڑے دھوؤگی۔۔۔۔۔۔

 

عائشہ بیگم بھی اس کے ساتھ کپڑے دھونے لگیں۔۔۔۔۔۔جس کا مائدہ کو بالکل بھی اعتراض نہیں تھا۔۔۔۔۔۔

 

تہزیب دور کھڑی یہ سارا نظارا دیکھ رہی تھی۔۔۔۔وہ دم بخور رہ گئی۔۔۔۔عائشہ بیگم اس عمر میں اپنی لاڈلی بہو کے ساتھ کپڑے دھونے لگیں تھی جبکہ تہزیب نے تو ہمیشہ پورے گھر کے کپڑے اکیلے دھوئے تھے۔۔۔کبھی کسی کام والی کا زکر نہیں ہوا تھا نہ کسی نے آکر کبھی مدد کی تھی۔۔۔۔۔اور عائشہ بیگم نے تو کبھی اس کی مدد کرنے کی خاطر کسی کام کو ہاتھ تک نہ لگایا تھا۔۔۔۔آج وہ مائدہ کے ساتھ ہر کام میں ہاتھ بٹاتیں تھیں۔۔۔۔۔اول تواسے کوئی کام کرنے ہی نہ دیا جاتا۔۔۔۔۔اگر وہ کسی کام کو ہاتھ لگا ہی لیتی تو عائشہ بیگم آگے بڑھ کر خود اس کا کام کردیتیں۔۔۔۔۔۔بھیگی پلکوں کے نیچےانکھوں کی پتلیاں دھندھلا کر ماضی میں کہیں چلی گئیں۔۔۔۔۔۔۔

 

مائدہ تو صرف اپنے شوہر کے کپڑے دھونے لگی ہے ۔۔۔۔میں تو پورے گھر کے کپڑے بغیر کسی خیل و خجت کے دھوتی رہی ہوں۔۔۔۔۔پچھلے آٹھ سال میں نے ہر کام اکیلے کیا ہے۔۔۔۔۔کپڑے دھوتے ہوئے کبھی ساس صاحبہ میرے پاس بھی نہیں آئی تھی۔۔۔۔بلکہ سارے کمروں سے ڈھونڈ ڈھونڈ کر سب کے گندے کپڑے لا کر میرے پاس رکھ جاتی تھیں۔۔۔۔۔کبھی کام والی بھی نہیں رکھی تھی۔۔۔۔۔۔۔

میں خود سارا کام کرتی تھی۔۔۔۔۔۔۔۔

 

مائدہ تو کتنی خوش بخت ہے۔۔۔۔۔۔اور میں ٹھہری۔۔۔۔کم بخت۔۔۔۔۔۔۔

 

میرا رنگ میرے آڑے آگیا۔۔۔۔۔۔۔کیا سانولی رنگت نفرت کرنا سکھاتی ہے۔۔۔۔۔کیا محبت ہمیں گورے رنگ سے ہی کرنی چاہئیے۔۔۔۔ہمارہ معاشرہ سانولے لوگوں کو اچھوت سمجھتا ہے کیا۔۔۔۔۔یہ بے انصافی میرے ساتھ ہی کیوں۔۔۔۔۔۔کیا مجھے بھی محبتیں پانے کا حق حاصل نہیں ہے۔۔۔۔۔۔

میری قسمت میں کسی کی ذرا بھی ہمدری نہیں ہے۔۔۔۔۔۔۔میرے حصے میں سسرال میں کسی بڑے کا پیار نہیں ہے کیا۔۔۔۔۔۔۔یہ سب مائدہ کے حصے میں ہی کیوں ہے۔۔۔۔۔۔۔۔

وہ خود سے باتیں کرتی ہوئی چائے بنا رہی تھی۔۔۔۔۔۔۔

میرے تین بچے ہوئے کبھی کسی نے نہیں کہا کہ آرام کر لو۔۔۔۔۔۔بچہ ہمیں پکڑا کر خود سو لو۔۔۔۔۔میں بچے بھی سنبھالتی اور گھر بھی سنبھالتی رہی۔۔۔۔۔۔۔۔

 

مائدہ تو کتنی خوش نصیب ہے۔۔۔۔۔تیرا سفید گورا رنگ تیرے لئے خوش نصیبی کا باعث ہے۔۔۔۔۔۔۔۔

تجھے تیری ساس نہ تودھوپ میں کھڑا ہونے دیتی ہے۔۔۔۔۔۔نہ تجھے چولہے کے سامنے زیادہ دیر تک کھڑا ہونے دیتی ہے۔۔۔۔۔نہ ہی تجھ پہ زیادہ بوجھ ڈالتی ہے۔۔۔۔۔۔تیری اک لوتی بچی کو اٹھا کے رکھتی ہیں تا کہ تم نیند پوری کر لو۔۔۔۔۔میں نے تو کبھی نیندیں بھی پوری نہیں کیں۔۔۔۔۔

میری نیندوں کا خیال ہی کبھی کسی کو نہیں آیا۔۔۔۔کیا مجھے سکون کی نیند لینے کا حق حاصل نہیں مولا۔۔۔واہ ری مائدہ۔۔۔۔۔۔۔تم سے کتنی محبت کرتا ہے سارا گھرانہ۔۔۔۔۔۔

 

سوچتی ہوئی تہزیب اپنے ہاتھ میں چائے کا کپ لئے کمرے کی طرف چل دی۔۔۔۔۔۔آنکھیں صاف کیں اور شام کےکھانے کا مینیو تیار کرنے لگی۔۔۔۔اسے پتا تھا کہ شام کا کھانا ساس صاحبہ اسی سے بنوانے والی ہیں۔۔۔۔۔مائدہ کو زیادہ کام کروایا تو اس کا رنگ ماند نہ پڑنے لگے۔۔۔۔۔۔۔

 

کوئی کام ڈھنگ سے نہیں کرتی۔۔۔۔۔اس کا تو دل ہی نہیں چاہتا کسی کام کو ہاتھ لگائے۔۔۔۔۔۔۔کوئی کام بولو تو موت پڑ جاتی ہے مہارانی کو۔۔۔۔۔۔ایسے اکڑ دکھاتی ہے جیسے کوہ قاف کی شہزادی ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔عائشہ خاتون اپنی حسین و جمیل بہو کے کمرے میں بیٹھی تہزیب کی غیبتوں میں مصروف تھیں جبکہ ان کو اس بات کا علم نہیں تھا کہ اس کمرے کےساتھ جو کچن ہے وہاں تہزیب سبزی کاٹتے ہوئے سب کچھ سن رہی ہے۔۔۔۔۔۔

 

جی ماما جان۔۔۔۔۔میں نے بھی دیکھا تھا صبح۔۔۔۔۔فون پہ بڑی ہنس ہنس کے باتیں کر رہی تھیں۔۔۔۔۔۔۔مائدہ نے ساس کی ہاں میں ہاں ملاتے ہوئے عائشہ بیگم کو تہزیب کے متعلق مزید بہکایا۔۔۔۔۔۔۔

مائدہ پہلے بھی تہزہب کی چغلیاں بھرپور انداز سے کرتی تھی لیکن آج تو تہزیب نے اپنے کانوں سے سن لیا تھا۔

 

یہ وہ مائدہ تھی جو ان سب کی نظر میں نہائت حسین و جمیل تھی۔۔۔۔جبکہ اس کا صرف رنگ ہی گورا تھا۔۔۔۔۔یہ حسن پری بھی چغلیاں اور غیبتیں کرنا پورے جوش وحروش سے جانتی تھی۔۔۔۔۔۔۔۔تہزیب کو یہ سب سن کہ ایسا دھچکا لگا کہ اس کا سر چکرا گیا۔۔۔۔۔ہاتھ سے چاقو نیچے گرا اور دوسرے ہاتھ سے ساری سبزی بکھر گئی۔۔۔۔۔۔۔

 

مائدہ سے تو مجھے یہ امید نہ تھی۔۔۔۔۔۔۔وہ تو پڑھی لکھی لڑکی ہے۔۔۔۔میں سمجھ رہی تھی شائد یہ لڑکی میرا دکھ سمجھے گی۔۔۔۔مگر یہ تو انہی میں شامل ہو گئی۔۔۔۔۔۔

 

جتنی محبت اور عزت مائدہ کو سسرال سے ملی تھی۔۔۔۔۔اس نے تو سسرال کا ہی دم بھرنا تھا۔۔۔۔بھلا ایک سانولی اور تنہا بھابھی کا ساتھ وہ کیونکر دیتی۔۔۔۔۔۔ایسی بھابھی جس کو سب نیچ سمجھتے تھے۔۔۔۔جس سے کبھی کسی نے محبت ظاہر نہیں کی تھی۔۔۔۔نہ اسے کوئی اچھا سمجھتا تھا۔۔۔۔۔ایسی عورت کا ساتھ مائدہ کیونکر دیتی۔۔۔۔۔۔۔۔

 

آج تہزیب کا دل اس انداز سے ٹوٹا تھا کہ شائد اب کبھی نہ جڑتا ۔۔۔۔۔۔

 

یہ حسین چہرے بھی کتنے بھیانک ہوتے ہیں۔۔۔۔۔ان چہروں پہ بھی ایک نقاب ہوتا ہے۔اس نقاب کے پیچھے کا چہرہ صرف وہ خودجانتے ہیں یا پھر وہ خودبھی نہیں جاننا چاہتے۔۔۔۔۔۔۔کیونکہ دنیا نے ان چہروں کو حسین و شاداب سمجھ کر اس قدر سراہا ہوتاہے کہ ایسے لوگ انہی چہروں کو سچ سمجھنے لگتے ہیں جبکہ ان کے پیچھے چھپا اصل والاچہرہ کوئی دوسرا نہیں جان سکتا۔۔۔۔۔۔اس اصل والے چہروں سے تہزیب جیسے لوگ ہی آشنا ہوتے ہیں۔۔۔۔۔۔

 

مائدہ کی باتیں تہزیب کی سماعتوں پہ بجلی بن کے گری تھیں۔۔۔۔۔۔اسے اس دھچکے کی شدت سے بخار نے آ لیا۔۔۔۔۔۔کئی روز تک وہ بخار میں مبتلا رہی۔۔۔۔۔۔

اسی حالت میں بچوں کو کھانا بھی بنا کے دیتی رہی۔۔۔۔ساس صاحبہ بدستور کام بھی کرواتی رہیں۔۔۔۔۔تہزیب نم آنکھوں کےساتھ بغیر کسی بات کا انکار کئے اپنے فرائض بخوبی انجام دیتی رہی ۔۔۔۔۔۔

 

اسی دوران مائدہ کو بھی فلو نے آ لیا۔۔۔۔۔صبح سے شام تک وہ چھینکیں مارتی رہی اور زکام سے اس کےسر میں بھی درد شروع ہو گیا۔۔۔۔۔۔

 

تم کس قدر لاپرواہ انسان ہو عاصم۔۔۔۔۔۔بیوی صبح سےبیمار ہے۔۔۔۔اتنا زکام لگ گیا ہےمائدہ کو۔۔۔۔۔زرا سا بھی ہوش ہے تمہیں۔۔۔۔۔۔۔۔کم از کم ڈاکٹر کو ہی گھر بلا لو۔۔۔۔۔باقی اس کی دیکھ بھال میں خود کر لوں گی۔۔۔۔عائشہ خاتون نے چھوٹے بیٹے عاصم کو سب گھر والوں کے سامنے ڈانٹ پلا دی تھی۔۔۔۔۔

 

امی جی۔۔۔صبح سے یہ الفاظ آپ نے مجھے بیس دفعہ کہے ہیں۔۔۔۔۔میں فارغ نہیں تھا۔۔۔جب فارغ ہوا تو ڈاکٹر کو کال کر دی تھی۔۔۔۔۔ڈاکٹر شہزاد اس وقت مریضوں کے ساتھ بزی تھا۔۔۔۔۔ابھی آجائےگا۔۔۔۔آپ فکر نہ کریں۔۔۔۔۔ویسے بھی آپ نے مائدہ کو چھوٹے گوشت کی یخنی بنا کر پلائی تو ہے۔۔۔۔۔۔مجھے آپ سے بھی زیادہ فکر ہے۔۔۔۔عاصم نے ایک لمبی سی تقرہر ماں کے سامنے کردی۔۔۔۔۔۔

 

آئے ہائے کب آئے گا ڈاکٹر۔۔۔۔۔۔کب سے بچاری بیڈ پہ چپ سادھ پڑی ہے۔۔۔۔دیکھو تو بچاری کا کیا حال ہو گیا ہے۔۔۔۔۔یخنی بھی پلائی ہے۔۔۔۔۔۔سر بھی دبایا ہے۔۔۔۔اس کو کہیں بخار ہی نہ ہو جائے۔۔۔۔۔۔۔۔

 

عائشہ خاتون شدید مضطرب نظر آ رہی تھیں جبکہ مائدہ اپنے کمرے میں ںسکون کی نیند سو رہی تھی۔۔۔۔۔۔تہزیب کو ہر آنے والے دن اپنی ساس کی نئی سے نئی رونما ہونے والی باتیں توڑ جاتیں۔۔۔۔۔۔

یہ بد بخت کئی دن سے بخار میں مبتلا تھی۔۔۔۔۔۔اسی بیماری کی حالت میں وہ سارے کام کاج کرنے کے ساتھ بچے بھی سمبھالتی اور دل کو چیر دینے والی نانصافیاں اپنی آنکھوں کے سامنے دیکھ کر صبر کر کے رہ جاتی۔۔۔۔۔۔۔حیدر نے بھی اس کی بیماری کی طرف کوئی خاص توجہ نہ دی اور نہ ہی گھر کے کسی فرد نے اس کو ڈاکٹر کے پاس جانے کا مشورہ دیا تھا۔۔۔۔۔۔۔

 

اس کا سینہ اندر تک چھلنی ہو چکا تھا۔۔۔۔۔لیکن وہ کسی کو اپنا سینہ چیر کر نہیں دکھا سکتی تھی۔۔۔۔۔۔نہ ہی وہ کسی کو بتا سکتی تھی کہ اس کے اندر بھی ایک نازک بہو تھی جس کو محبتوں کی ضرورت تھی۔۔۔۔۔کم از کم اس کی وفاداریوں اور خدمتوں کو ہی سراہ دیا جاتا۔۔۔۔مگر ایسا کچھ نہ ہوا۔۔۔۔۔۔۔کئی سال اس گھر میں گزر جانے کے بعد بھی کبھی کسی نے ہمدردی کے دو بول نہیں بولے تھے۔۔۔۔۔۔۔

ایسے بول ۔۔۔۔جو مائدہ سے ہر کوئی بولتا۔۔۔۔۔۔۔ایسی محبت جو مائدہ سے ہر کوئی کرتا۔۔۔۔۔۔۔نظروں میں بھرا ہوا ایسا پیار جو سب مائدہ پہ نچھاور ہوتا۔۔۔۔۔

 

مائدہ کو آتے ہی وہ حقوق دے دئے گئے تھے جن کی اصل حقدار تہزیب تھی۔۔۔۔۔مگر تہزیب کو ثانوی حیثیت سے نوازا گیا کیونکہ اس کے چہرے کی رنگت سانولی تھی۔۔۔۔۔مائدہ کا رنگ بے شمار گورا ہونے کی وجہ سے وہ شادی کے کچھ سال کے بعد بھی ایسے سراہی جاتی جیسےآج ہی بیاہ کر اس گھر میں لائی گئی ہے۔۔۔۔۔۔۔

مائدہ کو اپنی حیثیت کا جلد ہی ادراک ہو گیا جس کی وجہ سے وہ بھی تہزیب بھابھی کو نہ ہی منہ لگاتی اور نہ ہی ان کی عزت کرتی تھی۔۔۔۔۔

 

جب پورا گھرانہ ہی تہزیب کی عزت نہیں کرتا تھا۔۔۔۔تو مائدہ کیونکر اس عورت کو عزت و احترام دیتی۔۔۔۔۔۔۔جب ہر کوئی تہزیب کی پیٹھ پیچھے اس کی برائی کرتا تھا تو مائدہ بھی اس کار بد میں ساس کا بھرپور ساتھ دیتی تھی۔۔۔۔۔۔۔وہ ہر گز بھی پیچھے نہ رہتی۔۔۔۔۔۔مائدہ کا یہی عمل تہزیب کو توڑ پھوڑ گیا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔تہزیب کا دل و دماغ کبھی کبھی شل ہو جاتا۔۔۔۔۔۔۔۔

 

مجھے خود سمجھ نہیں آتا کہ مجھ سے کیا گناہ ہو گیا ہے۔۔۔۔۔میں نے تو ہمیشہ مزدوروں کی طرح اس گھر میں کام کئے ہیں کبھی ان کو کسی بات پہ انکار نہیں کیا۔کبھی کسی نے میرے نخرے اس طرح نہیں اٹھائے جس طرح چھوٹی بہو کے اٹھائے جاتے ہیں۔۔۔۔۔۔اور وجہ ایک ہی ہے۔۔۔۔وہ یہ کہ۔۔۔۔۔۔میں سانولی ہوں۔۔۔۔۔بھلا امی نے مجھے کیوں بیاہ دیا۔۔۔۔۔۔مجھے وہ زندگی یاد آتی ہے جب میں کنواری تھی۔۔۔۔۔کبھی کسی دوست نے کالی ہونے کا طعنہ نہیں دیا تھا۔۔۔۔کبھی کسی بہن بھائی یا کزن نے میری رنگت کو لے کر مجھے حقیر نہیں جانا تھا۔۔۔۔۔۔

اف خدایا ۔۔۔۔۔میں کس قدر حقیر جانی جاتی ہوں یہاں۔۔۔۔میری اتنی تذلیل ہوتی ہے۔۔۔مگر میں کچھ نہیں کر پاتی۔۔۔نہ کسی کو کچھ کہہ سکتی ہوں۔۔۔۔حیدر اپنے گھر والوں سے بے شمار محبت کرتے ہیں وہ میری بات سن بھی لیں تو کچھ نہیں کہتے۔۔۔۔۔شاید وہ بھی میری طرح بس خاموشی سے وقت گزار رہے ہیں۔۔۔۔۔۔۔جیسے میں۔۔۔۔وقت کے گزرنے کا انتظار کرتی ہوں۔۔۔۔۔۔

 

کیا میں خوبصورت نہیں ہوں امی؟؟؟؟۔

 

تم بہت خوبصورت ہو۔۔۔اتنے تیکھے اورحسین نقوش ہیں تمہارے۔۔۔۔۔۔۔صرف رنگت زراسی گندمی ہے۔۔۔۔۔۔تمہیں پتا ہے گندمی رنگ میں کتنی کشش اور حسن پنہا ہوتا ہے۔۔۔۔۔۔

 

نہیں امی۔۔۔۔۔۔یہ سب آپ کہہ رہی ہیں۔۔۔۔کیونکہ آپ ماں ہیں۔۔۔۔۔۔۔یہ معاشرہ گندمی رنگ کو قبول نہیں کرتا۔۔۔۔۔خاص طور پہ ہم جیسے مڈل کلاس لوگ۔۔۔۔۔۔۔۔سفید رنگ کو فوقیت اور ترجیخ دیتے ہیں۔۔۔۔۔۔۔۔کیا آپ جانتی ہیں۔۔۔۔حیدر بھی کبھی کبھی مائدہ سے ہنس ہنس کے باتیں کرتے ہیں تو میرا دل جلتا ہے۔۔۔۔۔۔۔۔وہ مجھ سے زیادہ خوبصورت نہیں ہے امی۔۔۔۔۔۔لیکن خدا نے اسے گورا رنگ دے کر اسے دنیا میں سبقت عطا کر دی ہے۔۔۔۔۔۔گھر کے سب مرد اس کے گورے رنگ کے دلدادہ ہیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔میرے سانولے رنگ نے مجھ پہ بہت سارے بوجھ اکٹھے ڈالے ہیں۔۔۔۔۔۔سب سے بڑا بوجھ اس توہین آمیز جملے کو سننا ہے کہ مائدہ جیسی شہزادی اس خاندان کو گفٹ ملی ہے۔۔۔۔۔کیا میں نے اس گھر کے لئے کچھ نہیں کیا۔۔۔۔۔میں نے تو ماہ شباب اس گھر پہ وار دئے ہیں لیکن کسی کو اس بات کا ادراک ہی نہیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔امی۔۔۔۔میری سب خدمتیں رائیگاں گئیں۔۔۔۔۔۔میرا خلوص میری چاہتیں۔۔۔۔میرا دن رات ایک کرنا سب ہیچ ہے۔۔۔۔۔۔۔

 

وہ نمناک آنکھوں سے سامنے والی دیوار کو دیکھتے ہوئے لہجے میں درد بھرے ہوئے امی سے فون پہ بات کر رہی تھی۔۔۔۔۔۔

 

تم جنت میں حوروں کے ساتھ ہوگی۔۔۔اس لئے خدا نے تم پہ یہ آزمائش ڈالی ہے۔۔۔۔ماں تھی۔۔۔۔اس سے زیادہ مناسب جواب نہ دے سکی۔۔۔۔۔۔

 

سنو وہ حسین و جمیل لڑکی

آنکھوں میں کئی خواب لئے

پھرتی تھی اجاڑ جنگل میں

کچھ لمحوں نے اسے توڑا تھا

سینہ اس کا چھلنی تھا

وجود اس کا بکھرا ہوا تھا

وہ روپ کی شہزادی

اپنے رنگ سے مات کھا گئی تھی

اس کی رنگت سانولی سی

اسکے آڑے آ گئی تھی

اس کو زمانہ دھتکار چکا تھا

رنگ بد بخت کا سلونا تھا

 

۔۔۔۔۔۔۔۔۔ختم شد۔۔۔۔۔۔۔۔۔

 

 




COMMENTS

Name

After Marriage Based,1,Age Difference Based,1,Armed Forces Based,1,Article,7,complete,2,Complete Novel,611,Contract Marriage,1,Doctor’s Based,1,Ebooks,9,Episodic,276,Feudal System Based,1,Forced Marriage Based Novels,4,Funny Romantic Based,1,Gangster Based,2,HeeR Zadi,1,Hero Boss Based,1,Hero Driver Based,1,Hero Police Officer,1,Horror Novel,2,Hostel Based Romantic,1,Isha Gill,1,Khoon Bha Based,2,Poetry,13,Rayeha Maryam,1,Razia Ahmad,1,Revenge Based,1,Romantic Novel,22,Rude Hero Base,3,Second Marriage Based,1,Short Story,68,youtube,30,
ltr
item
Urdu Novel Links: Bakht By Tehniyat Guria Short Story
Bakht By Tehniyat Guria Short Story
https://blogger.googleusercontent.com/img/b/R29vZ2xl/AVvXsEiUvKZQkkqOKtZ90O97HGpEpU8Cfd_A0evxieGG_pxNi0iaamwIShuWGnIOH2tog0KQ4tqC7guPkskEIm_xXucEdM9_-d06_bDxFsH9GbWm3IRczhD6bzM2WltfUp8lZ9jxxPD0gAjUqf8EeCjvJD8S4h9X5G6yje2MnTg9WlXg0x9UP3-KHjuHZNoQ/w400-h271/296903086_542243367655180_87130389675096172_n.jpg
https://blogger.googleusercontent.com/img/b/R29vZ2xl/AVvXsEiUvKZQkkqOKtZ90O97HGpEpU8Cfd_A0evxieGG_pxNi0iaamwIShuWGnIOH2tog0KQ4tqC7guPkskEIm_xXucEdM9_-d06_bDxFsH9GbWm3IRczhD6bzM2WltfUp8lZ9jxxPD0gAjUqf8EeCjvJD8S4h9X5G6yje2MnTg9WlXg0x9UP3-KHjuHZNoQ/s72-w400-c-h271/296903086_542243367655180_87130389675096172_n.jpg
Urdu Novel Links
https://www.urdunovellinks.com/2022/08/bakht-by-tehniyat-guria-short-story.html
https://www.urdunovellinks.com/
https://www.urdunovellinks.com/
https://www.urdunovellinks.com/2022/08/bakht-by-tehniyat-guria-short-story.html
true
392429665364731745
UTF-8
Loaded All Posts Not found any posts VIEW ALL Readmore Reply Cancel reply Delete By Home PAGES POSTS View All RECOMMENDED FOR YOU LABEL ARCHIVE SEARCH ALL POSTS Not found any post match with your request Back Home Sunday Monday Tuesday Wednesday Thursday Friday Saturday Sun Mon Tue Wed Thu Fri Sat January February March April May June July August September October November December Jan Feb Mar Apr May Jun Jul Aug Sep Oct Nov Dec just now 1 minute ago $$1$$ minutes ago 1 hour ago $$1$$ hours ago Yesterday $$1$$ days ago $$1$$ weeks ago more than 5 weeks ago Followers Follow THIS PREMIUM CONTENT IS LOCKED STEP 1: Share to a social network STEP 2: Click the link on your social network Copy All Code Select All Code All codes were copied to your clipboard Can not copy the codes / texts, please press [CTRL]+[C] (or CMD+C with Mac) to copy Table of Content