--> Aag By Tehniyat Guriya Short Story | Urdu Novel Links

Aag By Tehniyat Guriya Short Story

 Aag By Tehniyat Guriya Short Story آگ تہنیت گڑیا   جوانی کے دن لگ گئے۔۔۔۔۔۔اوروقت گزر گیا۔۔۔۔۔جب تک سمجھ آئی اسے۔۔۔۔۔تب وقت ہاتھ سے نکل چکا...

 Aag By Tehniyat Guriya Short Story



آگ

تہنیت گڑیا

 

جوانی کے دن لگ گئے۔۔۔۔۔۔اوروقت گزر گیا۔۔۔۔۔جب تک سمجھ آئی اسے۔۔۔۔۔تب وقت ہاتھ سے نکل چکا تھا۔۔۔۔۔۔لیکن اب کیا فائدہ پچھتانے کا۔۔۔۔۔اب تو چڑیاں کھیت سے سارا دانہ چگ کے جا چکی تھیں۔۔۔۔۔۔

 

وہ کچھ دیر کے رک کر اپنے الفاظ پہ غور کرنے لگی۔۔۔۔یہ الفاظ اسے اب خود کھوکھلے لگ رہے تھے۔۔۔۔۔اسے بھی اب یہی لگ رہا تھا کہ اس کے الفاظ کی اب کوئی وقعت نہیں۔۔۔۔۔۔کوئی نہیں سمجھ سکتا اس کو اب۔۔۔۔۔۔

 

خدا کے لئے۔۔۔۔مجھ پہ بہتان نہ لگاؤ۔۔۔۔۔میں نے کچھ نہیں کیا۔۔۔۔مجھ پہ الزامات نہ لگاؤ ۔۔۔۔۔۔۔میں نے چوری نہیں کی۔۔۔۔۔۔میں نے وہ چین اپنی ماں کو نہیں دی۔۔۔۔۔میری ماں کیوں ایسی گھٹیاحرکت کریں گی بھلاں۔۔۔۔۔۔۔۔میری ماں غریب ضرور ہے مگر اس نے کبھی ایسا سوچا بھی نہیں۔۔۔۔۔۔۔اپنی بیٹی کا گھر وہ کیونکر خراب کریں گی بھلاں۔۔۔۔۔۔۔۔۔

 

اسے اچھی طرح معلوم ہو چلا تھا کہ وہ جو کچھ بھی بول رہی ہے۔۔۔۔وہ سب ان کے کانوں تک نہیں پہنچ رہا۔۔۔۔۔۔وہ اس وقت بہرے ہو چکے ہیں وہ صرف اپنی لاڈلی بیٹی کی سن رہے ہیں۔۔۔۔جو سماریہ کی نظر میں اصل قصور وار تھی۔۔۔۔۔۔

 

دیکھو سماریہ میڈم۔۔۔۔چوری تو تم نے کی ہے۔۔۔۔۔پورے ایک تولے کا ہار تھا جو تم نے اپنی ماں کو دیا ہے۔۔۔۔۔اس بار جب تم اپنے میکے گئی تھی تو وہ ہار پہن کے گئی تھی۔۔۔۔۔واپسی پہ وہ ہار تمہارے گلے میں نہیں تھا۔۔۔۔۔۔

ماں باپ کی اکلوتی لاڈلی بیٹی نے دوبارہ وہی الزام سماریہ پہ لگایا۔۔۔۔۔۔ 

خدا کا نام لو نگین۔۔۔۔۔۔۔میں نے کبھی ایسی حرکت نہیں کی۔۔۔۔میں آپ سب کو پہلے بھی بتا چکی ہوں کہ میں واقعی ہار پہن کے گئی تھی لیکن راستے میں کہیں گر گیا ہے۔۔۔۔مجھے خود اس بات کا پتا ہی تب چلا جب اچانک میری نظر اپنے گریبان پہ پڑی تو وہاں ہار نہیں تھا۔۔۔۔۔رومان دودھ پیتے ہوئے میرے گلے کی چین کو کھینچتا رہا ہے۔۔۔۔مجھے پورا یقین ہے رومان نے نیکلس کھینچا اور نیکلس راستے میں کہیں گر گیا ہے۔۔۔۔۔۔۔میں نے امی کو فون کیا ہے۔وہ بھی بہت پریشان ہیں انہوں نے سارا گھر چھان مارا ہے گھر میں کہیں گرا ہوتا تو ضرور ملتا۔۔۔۔۔۔۔

 

بند کرو یہ ڈرامے۔۔۔۔۔وہ نیکلس گھر سے اسی لئے نہیں مل رہا کہ وہ تمہاری اماں کے پاس ہے۔۔۔۔۔۔

نگین نے سماریہ پہ ایک اور وار کیا۔۔۔۔۔۔

 

راخیل ۔۔۔میرا اعتبار کریں۔۔۔۔۔میں نے اپنی امی کو نہیں دیا۔۔۔۔میں نے کچھ نہیں کیا۔۔۔۔۔میں ایسی نہیں۔۔۔۔۔۔ایک سال ہو گیا ہے ہماری شادی کو۔۔۔۔۔کیا آپ نے اس عرصے میں میرے اندر ایسی کوئی برائی دیکھی۔۔۔۔۔۔

وہ اس بار مدد طلب الفاظ لئے اپنے شوہر کی جانب بڑھی۔۔۔جو بالکل خاموش کھڑا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔

 

ایک طرف اس کی لاڈلی بہن تھی تو ایک طرف بیوی جو اسے بظاہر بے قصور ہی لگ رہی تھی۔۔۔۔لیکن ماں باپ اور بہن بھائیوں کی دشمنی مول نہیں لینا چاہتا تھا اس لئے خانوشی سے سمایہ کو کوئی جواب دئے بغیر وہاں سے راہ فرار لی۔۔۔۔۔۔۔اسے شاید معلوم تھا کہ اس کی بہن پانچ بھائیوں کی اکلوتی اور لاڈلی بہن ہے۔۔۔۔بچپن سے ماں باپ نے اسے مہمل کے کپڑے کی طرح رکھا ہوا تھا۔۔۔۔اسے کبھی کانٹا بھی چبھنے نہیں دیا تھا۔۔۔۔۔۔۔اس کے ہر چھوٹے بڑے عیبوں پہ ماں نے پردے ڈالے تھے۔۔۔۔۔نگین کے باپ تک بھی نگین کی کوئی ایسی ویسی بات نہیں پہنچ پاتی تھی۔۔۔۔۔۔۔

نگین کو ناز نخرے بھی اٹھوانے آتے تھے۔۔۔۔۔۔پانچ بھائیوں کی ایک بہن ہونے سے بھرپور فائدہ اٹھاتی تھی۔۔۔۔۔۔

 

ہار واقعی راستے میں کہیں گر گیا تھا۔۔۔۔۔۔جس کا صدمہ سماریہ کو سب سے زیادہ تھا۔۔۔۔۔۔غم سے نڈھال ہوکے اسے پورا ایک ہفتہ بخار بھی رہا۔۔۔۔۔۔۔۔یہ ہار بڑے پیار سے راخیل نے اسے منہ دکھائی پہ دیا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔رومان ان کا پہلا بچہ تھا جو دودھ پیتے ہوئے اس ہار کو کھینچتا رہتا۔۔۔۔۔سماریہ یہ ہار ہر وقت گلے میں پہن کے رکھتی تھی۔۔۔۔۔۔بس یہی اس کی غلطی تھی کہ جب بچے پیدا ہو جائیں تو زندگی کے بہت سے معمولات میں تبدیلی آتی ہے۔۔۔۔۔اپنے پہناووں میں بھی بدلاؤ لانا چاہئے۔۔۔۔۔مگر اس نادان نے یہ سمجھ کر ہار پہنے رکھا کہ راخیل نے بہت پیار سے پہنایا ہے تو پہن کے رکھنا چاہئے۔۔۔۔۔۔۔۔۔

 

نند کے ہاتھوں پہلی بے عزتی دیکھ کر اسے شدید صدمہ ہوا۔۔۔۔۔۔۔۔نند ایسی بھی ہوتی ہے۔۔۔۔۔صاف الزام لگا دیا مجھ پہ۔۔۔۔۔۔

 

دوسرے بھائیوں کی طرح راخیل بھی نگین سے بہت پیار کرتا تھا۔اسی لئے بہن کی حرکتیں دیکھتے ہوئے بھی اسے کچھ نہ کہتا۔۔۔۔۔۔۔

 

امی ۔۔۔۔۔۔۔میں نے خود میسجز پڑھے ہیں۔۔۔۔۔سماریہ بھابھی نے اپنے موبائل سے اپنی کزن کو ہمارے خلاف اتنا کچھ بتایا ہوا تھا۔۔۔۔۔۔میں تو اچانک سماریہ بھابھی کے کمرے میں گئی تو اس کا موبائل پڑا ہوا تھا میں نے سوچا دیکھوں تو زرا کس کس سے باتیں کرتی ہے۔۔۔۔۔۔۔اپنی کزن کو ساری باتیں بتائی ہوئی تھیں۔۔۔۔۔۔۔

 

نگین دبے الفاظ میں ماں کو اپنی حرکت بہت فخر سے بتا رہی تھی۔۔۔۔۔۔

 

اچھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔اتنی چالاک ہے یہ لڑکی۔۔۔۔۔

 

ماں تو پہلے ہی نگین کی محبت میں سب کچھ کر گزرنے کو تیار تھی۔۔۔۔اب نگین کی اس حرکت پہ اسے ڈانٹنے کی بجائے اس کی باتوں میں آگئیں۔۔۔۔۔

نگین کی بہت پرانی عادت تھی دوسروں کے موبائل چیک کرتی۔۔۔۔۔کون کس سے کیا باتیں کرتا ہے اسے سب معلوم تھا۔۔۔۔۔۔۔اب سماریہ پہ پہلے دن سے نظر رکھے ہوئے تھی۔۔۔۔۔۔سماریہ ۔۔۔۔۔جیسی خود تھی۔۔۔۔دوسروں کو بھی ویسا سمجھتی تھی۔اس لئے کبھی موبائل کو پاسورڈ نہیں لگایا تھا۔۔۔۔۔اور نہ ہی کبھی اپنے موبائل سے ایسے مسجز ڈیلیٹ کئے تھے۔۔۔۔۔۔اس نے واقعی اپنی کزن سے دل کا دکھ بیان کیا تھا۔۔۔۔اس کی کزن اس کی سب سے اچھی دوست بھی تھی۔۔۔۔دونوں ایک دوسرے سے دکھ سکھ کی ساری باتیں کرتی تھیں۔۔۔۔۔۔۔نگین نے سماریہ کو کس قدر تنگ کیا ہوا تھا یہ سب باتیں اس نے اپنی کزن سے بیان کیں۔۔۔۔۔۔لیکن غلطی یہ کر دی کہ میسجز ڈیلیٹ نہ کئے۔۔۔۔۔۔۔۔جس کا خمیازہ اس نے آج اچھی طرح بھگتنا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

 

راخیل بیٹا ۔۔۔۔۔۔۔میں نے خود میسج اس کے فون میں پڑھے ہیں۔۔۔۔اس نے اتنی جلی کٹی باتیں کی ہیں ہمارے متعلق۔۔۔۔۔ نہ جانے کس کس کو کیا کیا بتاتی ہے۔۔۔۔۔۔۔پوچھو اس سے۔۔۔۔۔جلدی پوچھو۔۔۔۔کیوں ہمارے گھر کی باتیں لوگوں سے کرتی ہے۔۔۔۔۔۔وہ وردہ بی بی اس کو اس کی پسند کی ذندگی تو نہیں دے سکتی ناں۔۔۔جس کے سامنے اس نے ہمارے گھر کا رونا رویا ہے۔۔۔۔۔۔۔

راخیل کی امی اونچی آواز میں راخیل کو ایک ایک بات ٹی وی لاؤنج میں کھڑے ہو کے بتا رہی تھیں۔۔۔۔جہاں سب بھائی ابو اور نگین بھی اس کا تماشا دیکھ رہے تھے۔۔۔۔۔۔۔امی نے نگین کا نام اس معاملے میں آنے ہی نہ دیا۔۔۔۔اور کہا میں نے خود سارے میسج پڑھے ہیں۔۔۔۔وہ اچھی طرح بیٹی کی ڈھال بننا جانتی تھیں۔۔۔۔۔۔۔

 

راخیل آپ میرا یقین کریں ۔۔۔۔۔۔۔میں نے وردہ سے ایسی کوئی بات نہیں کی۔۔۔۔اور کر بھی لی تو میرا موبائل چیک کرنے کی کیا ضرورت ہے۔۔۔۔جس نے چیک کیا ہے اس نے کچھ باتیں خود سے بھی لگائی ہیں۔۔۔۔۔۔۔

سماریی کی سمجھ میں نہیں آرہا تھا کہ اس صورت حال میں کیا کہے۔۔۔۔۔وہ جو بھی کہہ رہی تھی سب اسی کے مخالف تھے۔۔۔۔۔۔۔

 

راخیل نے سب کے سامنے اس کے منہ پہ زور دار تھپڑ رسید کیا۔۔۔۔۔۔سماریہ کا دماغ شل ہو گیا۔۔۔۔۔۔وہ جانتی تھی یہ سب نگین کی وجہ سے ہوا۔۔۔۔۔وہ زار و قطار روتی رہی دہائیاں دیتی رہی مگر سب لوگ اسے لعن طعن کرتے رہے۔۔۔۔نگین کے چہرے پہ ہلکی سی مسکراہٹ سماریہ نے دیکھ لی تھی۔۔۔۔۔۔۔۔

 

معافی مانگو امی سے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

میں کہتا ہوں ۔۔۔۔معافی مانگو۔۔۔۔۔

راخیل کی کرہت اواز سارا کو بہت بری لگ رہی تھی لیکن اس کے سوا اب کوئی چارہ بھی نہیں تھا۔۔۔۔۔وہ حالات کو سازگار کرنا چاہتی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔اپنے جرم پہ سر تسلیم خم کرتے ہوئے وہ ساس کے پاس بیٹھی گئی جو صوفے پہ بیٹھی سب کچھ کروا رہی تھیں۔۔۔۔سمایہ نے ہاتھ جوڑے اور رو رو کر معافیاں مانگنے لگی۔۔۔۔۔

 

امی مجھے معاف کر دیں ۔۔۔۔۔اب کبھی ایسا نہیں ہو گا۔۔۔۔۔۔میں کبھی ایسی غلطی نہیں کروں گی۔۔۔۔۔۔

 

وہ معافیاں مانگ کر اپنے کمرے میں رو رو کر ہلکان ہو چکی تھی۔۔۔۔۔۔۔۔

 

راخیل ۔۔۔۔۔اگر میں نے کوئی بات کر بھی لی تو نگین کو کیا ضرورت تھی میرا موبائل چیک کرنے کی۔ہمارے گھر میں تو کبھی ایسا نہیں ہوا۔۔۔۔ہم اپنی چیز گھر کے کسی بھی کونے میں رکھ دیتے ہیں ۔۔۔۔کوئی دوسرا اس کو ہاتھ تک نہیں لگاتا۔۔۔۔یہ تو امانت ہوتی ہے۔۔۔۔۔۔اتنی گھٹیا حرکتوں سے ہی لڑائیاں لگتی ہیں۔آپ کی بہن نے لڑائی بھی کروائی مجھے زلیل بھی کروایا اور مجھ سے معافی بھی منگوائی۔۔۔۔اور تو اور۔۔۔۔۔۔آپ نے سب کے سامنے مجھے تھپڑ مار کر رسوا بھی کر دیا۔۔۔۔۔۔۔۔

 

وہ روتی ہوئی راخیل کو بول رہی تھی۔۔۔۔

 

ہاں تو ۔۔۔۔تم نے بھی تو۔۔۔۔۔۔غلط کیا ناں۔۔۔۔۔۔۔اور خبر دار جو میری بہن کے متعلق کچھ بھی غلط کہا ۔۔۔۔۔۔وہ ہماری بہت لاڈلی ہے۔۔۔۔۔اس سے مقابلے نہ کیا کرو ۔۔۔۔اسے اپنی بہن سمجھو۔۔۔۔۔۔۔۔

 

میں تو اسے بہن ہی سمجھتی ہوں۔۔۔۔۔مگر وہ۔۔۔۔۔۔۔۔۔

 

سماریی کہتے کہتے رک گئی۔وہ جانتی تھی یہ فضول بحث ہے اور اس کا کوئی فائدہ نہیں۔۔۔۔۔۔۔

 

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

 

رات کافی گزر چکی تھی لیکن نگین کو نیند نہیں آرہی تھی۔۔۔۔۔اس کی عادت تھی رات بھر جاگتی اور صبح دو بجے تک سوئی رہتی۔۔۔۔۔۔ماں نے کبھی منع نہیں کیا تھا۔۔۔۔۔اگر کوئی بھائی بول بھی دیتا تو ماں اسے کہتی کہ ایک ہی بہن ہے تمہاری۔۔۔۔۔۔اسے سونے دو۔۔۔۔۔سسرال میں کون سونے دیتا ہے۔۔۔۔۔ماں کے گھر ہی لڑکیاں سو سکتی ہیں بچاری۔۔۔۔۔۔۔کچھ ایسے الفاظ سن کر بھائی خاموش ہو جاتے۔۔۔۔۔۔۔

رات کے تین بج چکے تھے۔۔۔۔۔۔۔نگین خاموشی سے راخیل بھائی اور سماریہ بھابھی کے کمرے کی جانب بڑھی۔۔۔۔۔۔۔۔اس نے بغیر آواز کئے ان کے کمرے کا دروازہ کھولا۔۔۔۔۔۔۔۔اندر مدہم سی روشنی تھی۔۔۔۔۔وہ دونوں گہری نیند سو رہے تھے۔۔۔۔۔۔۔۔نگین دبے پاؤں سماریہ کے پاس آ کر رک گئی۔۔۔۔۔۔سماریہ اپنے بیٹے رومان کی طرف منہ کر کے گہری نیند سوئی ہوئی تھی ۔۔۔۔۔نگین نے اپنے ہاتھ میں پکڑا ہوا موبائل سماریہ کے تکئے کے نیچے رکھ دیا۔۔۔۔۔۔اور دبے پاؤں کمرے سے باہر نکل آئی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

 

امی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔مجھے پورا یقین ہے ۔۔۔۔موبائل سماریہ بھابھی کے پاس ہی ہے۔۔۔۔کیونکہ میں نے خود کل دیکھا تھا وہ میرے کمرے کے باہر بار بار چکر لگا رہی تھیں۔۔۔۔۔۔آپ ان سے پوچھیں تو سہی۔۔۔۔۔نگین نے دن چڑھتے ہی امی کے سامنے اپنا مدعا رکھا۔۔۔۔۔آج وہ دن بھر سوئی بھی نہیں تھی۔۔۔۔جلدی ہی اٹھ گئی تھی۔۔۔۔آج اس نے رات کے کارنامے پہ کاروائی جو کرنی تھی۔۔۔۔۔۔۔

 

اچھا۔۔۔۔۔۔۔۔کیا تم سچ کہہ رہی ہو۔۔۔۔۔۔امی نے قدرے حیرانی سے کہا۔۔۔۔۔

 

جی امی۔۔۔۔آپ اس سے پوچھیں تو سہی۔۔۔۔۔اگر وہ نہ مانی تو ہم اس کے کمرے کی تلاشی لیں گے۔۔۔۔۔۔۔پھر بھی نہ نکلا تو آپ مجھے جو چاہے کہہ لینا۔۔۔۔۔۔

نگین نے امی کو پورے اعتماد میں لیتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔اور امی صاحبہ تو پہلے ہی نگین کے ہر گناہ اور جرم پہ پردے ڈالتی تھیں۔۔۔۔آج بھی ہمیشہ کی طرح وہ نگین پہ اعتبار کر کے اس کے جرم میں برابر کی شریک ہوگئیں۔۔۔۔۔۔۔۔

 

راخیل ۔۔۔۔تم پوچھو تو سہی اپنی بیوی کو۔۔۔۔۔۔جتنی معصوم لگتی ہے۔۔۔۔مگر وہ اتنی معصوم ہے نہیں۔۔۔۔۔۔۔میری بچی بچاری صبح سے اپنا موبائل ڈھونڈ رہی ہے۔۔۔۔۔کتنے پیار سے تمہارے ابو نے باہر سے خاص طور پہ اپنی نگین کے لئے منگوایا تھا۔۔۔۔۔بچاری کا رو رو کر برا حال ہے۔۔۔۔۔۔۔اسے کہیں موبائل نہیں مل رہا۔۔۔۔۔۔۔

 

مگر امی۔۔۔۔۔۔سماریہ بھلاں کیوں نگین کا موبائل لے گی۔۔۔۔۔اس کے پاس تو اپنا موبائل ہے۔۔۔۔اور ویسے بھی سماریہ کو چوری کی عادت نہیں۔۔۔۔۔میں جانتا ہوں اسے۔۔۔۔۔۔

راخیل نے کسمساتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔

 

دیکھا۔۔۔۔میں کہتی تھی ناں۔۔۔۔بھائی کبھی بھی اپنی بیوی کی غلطی نہیں مانیں گے۔۔۔۔۔۔نگین نے ماں کے پلو میں چھپتے ہوئے راخیل بھائی کو اکسایا۔۔۔۔

 

تم چپ رہو میں تمہیں نکلوا کے دیتی ہوں۔۔۔۔۔امی نے آہستہ آواز میں نگین کو چپ کروایا۔۔۔۔۔

 

تم بیوی کو بلاو تو سہی۔۔۔۔۔امی نے راخیل کو ہاتھ کے اشارے سے بلانے کا کہا۔

 

ٹھیک ہے آپ اس سے پوچھ کے تسلی کر لیں۔۔۔۔۔لیکن مجھے یقین ہے آپ کی اپنی بیٹی نے ہی کہیں رکھ دیا ہو گا اور اس کا نام لگا رہی ہے۔۔۔۔۔

سماریہ۔۔۔۔۔۔۔

سماریہ۔۔۔۔۔۔۔زرا باہر آؤ۔۔۔۔۔۔

راخیل نے بیوی کی سائیڈ لیتے ہوئے اسے آواز دی۔۔۔۔۔۔۔

 

تم نے نگین کا فون دیکھا کہیں۔۔۔۔۔۔۔

راخیل اس سے صاف الفاظ میں پوچھنے لگا۔۔۔۔۔

 

مجھے کیا معلوم راخیل۔۔۔۔۔۔میں کیا کروں گی اس کے فون کا۔۔۔۔۔میرے پاس تو اپنا فون موجود ہے۔۔۔۔۔

سماریہ نے لرزتے ہوئے جواب دیا۔۔۔۔۔۔۔وہ جانتی تھی اس پہ ایک اور الزام لگ چکا ہے۔۔۔۔اس نے اس الزام کو کسی بھی طرح دور کرنا تھا۔۔۔۔لیکن وہ کیا جانتی تھی کہ۔۔۔۔۔۔وہ اس الزام کی ذد میں رات کے تین بجے ہی آگئی تھی۔۔۔۔۔۔

 

چور چوری کر کے کبھی بھی نہیں مانتا۔۔۔۔۔۔میں نے خود دیکھا اس کو۔۔۔۔۔۔یہ لڑکی نگین کے کمرے کے باہر منڈلا رہی تھی۔۔۔۔۔میں تو خود حیران ہوں کہ بار بار نگین کے کمرے کی جانب کیوں جاتی ہے۔۔۔۔۔۔اور پھر میں نے اسے نگین کے کمرے سے نکلتے بھی دیکھا تھا۔۔۔۔۔۔

امی صاحبہ نے دو چار باتیں خود سے شامل کیں اور گواہی کو مظبوط بنایا۔۔۔۔۔۔۔سب گھر والے جمع ہو چکے تھے۔۔۔۔۔۔۔۔

 

امی میں نے کیوں لینا تھا۔۔۔۔میں سچ کہتی ہوں میں نے موبائل نہیں لیا۔۔۔۔میں قسم کھانے کو تیار ہوں۔۔۔۔۔۔سماریہ دہائیاں دینے پہ آگئی تھی۔۔۔۔۔۔۔

 

اے بی بی۔۔۔۔۔۔۔یہ ٹسوے ہمارے سامنے نہ بہاؤ۔۔۔۔۔۔۔راخیل مجھے اجازت دو میں خود تمہارے کمرے کی تلاشی لوں۔۔۔۔۔۔امی نے آگے بڑھتے ہوئے سفاک لہجے میں کہا۔۔۔۔۔

 

ہاں امی یہی ٹھیک ہے۔۔۔۔چلیں میں بھی آپ کے ساتھ تلاشی لیتی ہوں۔۔۔۔بھائی آپ بھی آئیں۔ابھی پتا چل جائے گا۔۔۔۔دودھ کا دودھ اور پانی کا پانی ہو جائے گا۔۔۔۔۔۔۔

نگین نے امی کی ہاں میں ہاں ملاتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔

 

چلو دیکھ لو ۔۔۔۔۔نو پرابلم۔۔۔۔راخیل نے کچھ سوچتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔

سب لوگ کمرے کی تلاشی لے رہے تھے۔۔۔۔۔چھوٹے بھائی عادل نے تکیے کو اٹھایا تو نگین کا فون نکل آیا۔۔۔۔۔۔

 

یہ دیکھیں امی۔۔۔۔۔۔۔۔

 

۔۔۔۔۔۔۔۔

خدا کی قسم ۔۔۔۔میں سچ کہتی ہوں ۔۔۔۔۔یہ میں نے یہاں نہیں رکھا۔۔۔۔۔مجھے کچھ بھی معلوم نہیں۔۔۔۔موبائل کہاں سے آیا مجھے نہیں معلوم۔۔۔۔۔یہ نگین کی ہی کوئی چال ہے۔۔۔مجھے پھنسانے کی۔۔۔۔خدا کا واسطہ مجھ پہ یقین کریں۔۔۔۔۔۔۔وہ روتی بلکتی اور آنسو بہاتی کس کس کو ۔۔۔۔یقین دلاتی۔۔۔۔۔۔سب کچھ ان کے سامنے تھا۔۔۔۔۔۔پکا ثبوت مل چکا تھا۔۔۔۔۔۔وہ مجرم ،چور اور گنہگار ٹھہرائی جا چکی تھی۔۔۔۔۔۔

 

راخیل کی بہن اپنے مقصد میں کامیاب ہوگئی۔۔۔۔۔سماریہ ایک بار پھر پورے سسرال میں رسوا ہو گئی۔۔۔۔۔۔۔رسوائی تو ایک طرف تھی۔۔۔۔۔راخیل کی نفرت کا بھی نشانہ بنی۔۔۔۔۔۔۔

 

ہر روز ایک نیا الزام۔۔۔۔ہر روز نئی رسوائی۔۔۔۔۔ہر روز نگین کی حرکتوں کے ہاتھوں شکار ہوتی سماریہ بہت پریشان رہنے لگی تھی۔۔۔۔۔دکھ تو اس بات کا تھا کہ سب لوگ نگین کا ساتھ دیتے تھے۔۔۔۔۔سماریہ کی ایک نہ سنی جاتی۔۔۔۔۔شوہر بھی اس سے نفرت کرنے لگا تھا۔۔۔۔۔جس سے بھلائی کی کچھ امید تھی وہ شوہر ہی اس کا سہارا نہ بن پایا۔۔۔۔۔۔شاید یہی وجہ تھی کہ نگین کو بھی راستہ صاف نظر آتا تھا۔۔۔۔۔اگر شوہر ساتھ دینے والا ہوتا تو شاید نگین ایسا کم ہی کرتی۔۔۔۔۔۔۔۔۔

 

اکلوتا ہونا بہت خوبصورت ہوتا ہے۔۔۔۔۔۔لیکن کہیں ایسا بھی ہوتا ہے کہ اکلوتے لاڈلے بے جا لاڈ پیار میں اپنی عاقبت کو بھول بیٹھتے ہیں۔۔۔۔۔۔وہ ایسی گھناؤنی حرکتوں میں ملوث ہوتے ہیں کہ انہیں نہ خوف خداہوتا ہےنہ دنیا کا کوئی ڈر۔۔۔۔۔۔۔۔

 

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

 

سماریہ کے پاس بیٹھی نگین مسلسل اپنے فون پہ کسی سے میسجز پہ بات کر رہی تھی۔۔۔۔۔۔۔۔نگین کے چہرے پہ پھیلی ہلکی سی مسکراہٹ بتا رہی تھی کہ کافی خوشگوار باتیں ہو رہی ہیں۔۔۔۔۔۔سماریہ سب کچھ نوٹ کر رہی تھی۔۔۔۔ماں بھی پاس بیٹھی سبزی کاٹ رہی تھیں لیکن ماں کو کچھ علم نہیں تھا کہ میری لاڈلی کس سے باتیں کر رہی ہے۔۔۔۔۔۔سماریہ اچھی طرح جانتی تھی کہ نگین کسی لڑکے سے بات چیت کر رہی ہے۔۔۔۔۔سب کچھ جانتے ہوئے بھی وہ خاموش رہتی۔۔۔۔اگر بولتی تو نگین بہت چالاکی سے سارا الزام سماریہ پہ لگا سکتی تھی۔۔۔۔۔۔

کافی دن سے سماریہ دیکھ رہی تھی کہ نگین کسی سے ہنس ہنس کے باتیں کرتی ہے۔۔۔۔۔کبھی بہت رومینٹک موڈ میں ہوتی ہے تو کبھی بیت خوشی کا اظہار کرتی ہے۔۔۔۔۔۔۔بھائیوں کو اپنی بہن کے کرتوت کا اندازہ بھی نہیں تھا۔۔۔۔اکیلی بہن جو تھی۔۔۔۔سب بھائیوں کی محبت کی حقدار۔۔۔۔۔۔ماں باپ کی پری۔۔۔۔۔۔جو چاہتی کرتی۔۔۔۔۔۔۔سماریہ کا دل یہ سب دیکھ کے تڑپ رہاتھا۔۔۔۔۔۔

 

میری زندگی عذاب بنا کے مجھے رسوا کر کے اور مجھ پہ جھوٹے الزام لگا کے خود کن کاموں میں لگی ہے۔۔۔۔۔۔میں کسی نہ کسی طرح اس کا یہ چہرہ اس کے بھائی راخیل کو ضرور دکھانا چاہتی ہوں۔۔۔۔وہ جو میرا شوہر ہونے کے باوجود مجھ سے نفرت کرنے لگا ہے۔۔۔۔۔۔۔

 

کس سے بات کر رہی ہو نگین۔۔۔۔۔۔

 

سماریہ نے ہلکا سا نگین کو اس کی ماں کے سامنے ٹٹولنے کی کوشش کی۔۔۔تا کہ ماں کو کچھ علم ہو۔۔۔۔لیکن ماں کی آنکھوں پہ نگین کے پیار کی پٹی بندھی تھی۔۔۔۔وہ کچھ جاننا ہی نہیں چاہتی تھیں۔۔۔۔۔

 

اپنی دوست سے۔۔۔۔۔

 

اچھا۔۔۔۔بڑے خوشگوار موڈ میں باتیں ہورہی ہیں۔۔۔۔۔۔

 

ہاں تو اپنی دوست سے ہی بات ہو رہی ہے۔۔۔۔۔

 

کیا نام ہے تمہاری دوست کا۔۔۔۔۔۔

 

سماریہ کے سوال پہ نگین کو غصہ آ گیا۔۔۔۔۔۔اس سے پہکے کہ سماریہ مزید کچھ کہتی نگین نے مکار دماغ کو چلاتے ہوئے اپنی بڑی بھابھی پہ سفاکانہ الزام لگا دیا۔۔۔۔

 

اللہ کا شکر ہے بھابھی ۔۔۔میں آپ کی طرح نہیں ہوں۔۔۔۔پتا نہیں شادی سے پہلے کتنے لڑکوں سے آپ کے چکر چلے ہونگے۔۔۔۔اب بھی کوئی بھروسہ نہیں کس کا اے بات کرتی ہوں گی آپ۔۔۔۔۔۔

نگین کو بولتے ہوئے ذرا بھی ہچکچاہٹ نہیں ہو رہی تھی۔۔۔۔وہ جب بھی بولتی، نان سٹاپ بولتی تھی۔۔۔۔

 

نگین ۔۔۔۔کیا بات کر رہی ہو۔۔۔۔اپنی بھابھی کو ایسی باتیں کر رہی ہو۔۔۔۔۔۔میں نے تو کبھی سوچا بھی نہیں ایسی حرکتیں مجھے زیب ہی نہیں دیتیں۔۔۔۔میں تمہارے بھائی کی بیوی ہوں۔۔۔مجھے اپنی حدود کا علم ہے۔۔۔۔۔

سماریہ کا دماغ ایک بار پھر شل ہو چکا تھا۔وہ نگین کی حرکت کو آشکار کرنے چلی تھی خود پہ بہتان لگوا بیٹھی۔۔۔۔۔۔۔

 

ہاں ہاں۔۔۔بتائیں ناں بھابھی۔۔۔۔۔کتنے لڑکوں سے چکر چلائے آپ نے۔۔۔۔۔۔اپنے حسن کے جال میں کافی لفنگوں کو پھنسایا ہو گا۔۔۔۔۔۔۔۔یار شادی سے پہلے آپ جیسی لڑکیاں ایسا کرتی ہیں۔۔۔۔۔۔

نگین مسلسل بول رہی تھی جبکہ ماں بالکل خاموش بیٹھی ان دونوں کی گفتگو سن رہی تھی۔۔۔۔اس ماں نے ایک بار بھی اپنی لاڈلی بیٹی کو اتنی سفاک اور گھٹیا بات سے منع نہ کیا۔۔۔۔۔۔۔۔

اس ماں نے کبھی نگین کو کسی بات پہ منع ہی نہیں کیا تھا۔۔۔۔۔۔۔

 

نگین تمہیں ۔۔۔۔میں نے خود کئی بار دیکھا ہے لڑکوں سے باتیں کرتے ہوئے۔۔۔۔۔اور سارا الزام مجھ پہ لگا دیا۔۔۔۔۔کتنی چالاک ہو تم۔۔۔۔۔۔

 

سماریہ کی بات پہ اس بار ماں جی بھڑک گئیں

 

اے لڑکی۔۔۔۔۔تم نے میری بچی پہ اتنی بڑی بات باندھنے کی ہمت کیسے کی۔۔۔۔۔

 

امی جی۔۔۔۔۔۔۔کافی دیر سے نگین آپ کے سامنے مجھے اتنی گھٹیا باتیں کر رہی ہے۔۔۔۔وہ آپ کو نظر ہی نہیں آیا۔۔۔۔۔

میرے صاف دامن پہ کیچڑ اچھالتی ہی جا رہی ہے۔۔۔۔آپ خاموشی سے بیٹھی ہیں۔۔۔۔میری ایک ذرا سی بات آپ نے برداشت ہی نہیں کی۔۔۔۔۔میں خود پہ بہتان تراشی کب سے برداشت کر رہی ہوں۔۔۔

 

سماریہ بے بس ہو چکی تھی۔۔۔۔سب ایک طرف تھے۔۔۔۔اور وہ اکیلی ایک طرف۔۔۔۔۔۔۔وہ کچھ نہ کر کے بھی مورد الزام ٹھہرائی جاتی۔۔۔۔جس کی صفائی میں اس کے پاس کوئی ثبوت بھی نہ ہوتا۔۔۔۔۔۔۔

 

آ لینے دو آج راخیل کو۔۔۔۔۔سب بتاتی ہوں اسے۔۔۔۔۔ماں جی نے ہاتھ جھاڑتے ہوئے بڑے یقین سے کہا۔

 

نہیں امی ان تک بات نہ جائے۔۔۔۔میں نگین پہ کوئی الزام نہیں لگاتی۔۔۔میں نگین سے معافی مانگتی ہوں۔۔۔۔سماریہ کو یہ اچھی طرح معلوم تھا کہ اب اس پہ بہتان تراشی ہونے والی ہے وہ بھی پورے گھر کے سامنے۔۔۔۔اسی لئے بے قصور ہوتے ہوئے بھی معافیاں مانگنے لگی۔۔۔۔۔

 

اپنی عزت بچانے کی خاطر اس نے ہر طرح سے بات کو یہیں ختم کرنا چاہا۔۔۔۔۔۔۔

نگین کی ہنسی پورے حال میں گونج گئی۔۔۔۔۔۔

 

بچاری۔۔۔۔۔۔مجھ پہ الزام لگانے چلی تھیں۔۔۔۔۔۔

 

راخیل۔۔۔۔۔اپنی بیوی کو کنٹرول کرو۔۔۔۔۔۔تم سے محبت نہیں ملی تو ۔۔۔۔فون پہ الٹی سیدھی حرکتیں کرتی پھرتی ہے۔۔۔۔۔۔پتا نہیں کہاں کہاں منہ مارتی پھرتی ہے۔۔۔۔۔

 

آپ کہنا کیا چاہ رہی ہیں امی جی۔۔۔۔۔

راخیل کے چودہ طبق روشن ہو گئے۔۔۔۔۔

 

بیٹا میں کیا بولوں۔۔۔۔۔آج نگین نے اس کی چوری پکڑی تو نگین کی اتنی بےعزتی کی۔الٹا اس بچاری پہ الزام لگا دیا۔۔۔وہ تو سارا دن میرے پاس ہی ہوتی ہے ۔۔میں سب جانتی ہوں کہ وہ اپنی سہیلیوں سے میسج پہ بات چیت کرتی ہے۔۔۔۔یہ مکاریاں تو شادی شدہ لڑکیوں کو آتی ہیں۔۔۔نگین کو بھلاں زمانے کا کیا پتا۔۔۔۔۔۔۔

 

کون سی چوری۔۔۔کھل کر بولیں امی جی۔۔۔۔

 

بس بیٹا۔پتا نہیں کسی لڑکے کا نمبر دیکھا تھا نگین نے تمہاری بیوی کے موبائل میں۔بس اس بات پہ وہ بھڑک گئی اور الٹا میری بچی پہ الزام لگا دیا۔۔۔۔۔

 

ماں جی اپنا کام کر چکی تھیں۔۔۔۔۔۔

 

کیا یہ سچ ہے کہ تمہارا کانٹیکٹ ہے کسی کے ساتھ۔۔۔۔۔۔

 

راخیل نے واقعی اب اصل عدالت لگا لی تھی۔۔۔۔۔

 

راخیل کیسی باتیں کر رہے ہیں۔۔۔۔میں بھلاں ایسا گھناؤنا کام کیوں کروں گی۔۔۔۔میں نے تو آپ کی بہن کو دیکھا تھا۔۔۔۔۔۔ کسی سے باتیں کرتے ہوئے۔۔۔۔بلکہ کئی بار دیکھا ہے۔۔۔۔۔میں خدا کی قسم کھا کے کہتی ہوں۔۔۔۔۔کہ آپ کی بہن کو میسجز پہ بات کرتے دیکھا۔۔۔وہ میرے ساتھ بیٹھ کے میسج ٹائپ کر رہی تھی میں نے اپنی آنکھوں سے موبائل کی سکرین پہ دیکھا۔۔۔۔کسی لڑکے کا نام لے کر اس سے مخاطب تھی۔۔۔۔۔۔۔جب میں نے اس سے پوچھا کہ کس سے بات کر رہی ہو۔۔۔تو مجھ ہی پہ الزام لگا دیا۔۔۔۔امی تو اس پہ کبھی بھی الزام نہیں لگنے دیں گی اس لئے مجھے اس میں پھنسا دیا۔۔۔۔بلکہ نگین نے آج مجھے اتنی گھٹیا اور گندی باتیں کی ہیں جن کو سننا بھی مشکل تھا مگر میں نے صبر سے برداشت کیا۔۔۔۔۔

سماریہ اپنی صفائی میں ایک ہی سانس میں کافی کچھ بول چکی تھی۔۔۔۔۔۔اب یقین کرنا راخیل کا کام تھا۔۔۔۔لیکن وہ اپنی اکلوتی اور لاڈلی بہن کے متعلق کیسے اس طرح کی بات سوچ سکتا تھا۔۔۔۔۔۔

 

بہنیں اپنا خون ہوتی ہیں ان کے متعلق ایسی باتیں بھائیوں سے برداشت نہیں ہوتیں۔۔۔۔۔وہ سننا تو دور سوچنا بھی نہیں چاہتے۔۔۔۔۔ جبکہ بیوی پہ ایسے الزام دن میں کئی بار لگا کر اسے رسوا کر دیا جاتا ہے ۔۔۔۔۔کیونکہ وہ اپنا خون نہیں ہوتا۔۔۔۔کسی غیر کی بیٹی کو صرف بیوی اور بہو کا خطاب ملتا ہے۔۔۔۔۔۔کسی اور کے گھر سے آنے والی خاتون اپنا خون نہیں ہوتی۔۔۔۔۔۔اسے رسوا کرنا ذرا بھی مشکل نہیں ہوتا۔۔۔۔۔جبکہ اپنی بہنوں کے کرتوت جان کر بھی ان کو داغدار نہیں کیا جاتا۔۔۔۔۔۔اس معاملے میں مائیں اہم کردار ادا کرتی ہیں۔۔۔۔اپنی بیٹیوں کے ہر عیب کو چھپانا ان کو بڑی مہارت سے آتا ہے۔۔۔۔۔۔۔

 

تم نے میری بہن پہ اتنا گندہ الزام اتنی صفائی سے لگا دیا۔۔۔۔۔راخیل نے ایک بار پھر سماریہ کے چہرے پہ دو تھپڑ جڑ دئیے جن کی آواز باہر ٹی لاونج میں صاف آ رہی تھی۔۔۔دونوں ماں بیٹی ٹی وی لاونج میں خاموشی سے بیٹھی سب کچھ سن رہی تھیں۔۔۔۔۔۔

 

ان کے چہرے کی چمک بتا رہی تھی کہ دونوں کامیاب ہو چکی ہیں۔۔۔۔۔۔

دیکھتے ہی دیکھتے راخیل اسے بالوں سے گھسیٹتا ہوا باہر لے آیا۔۔۔۔

 

میرا یقین کریں راخیل۔۔۔۔خدا کا واسطہ ہے۔۔۔۔میں ایسی نہیں ہوں۔۔۔۔میں نے ایسی کوئی حرکت نہیں کی۔۔۔۔میرا یقین کریں۔۔۔۔

سماریہ کی آواز اس بار درد سے بھری ہوئی تھی آنکھوں میں آنسو تھے۔۔۔۔۔مگر پانچ بھائیوں کی لاڈلی بہن کو غلط کہنے والے کا کیا انجام ہوتا ہے۔۔۔یہ تو آج پورا زمانہ دیکھ رہا تھا۔۔۔۔۔

 

سماریہ نے کئی الزام سہے۔۔۔مگر برداشت کرتی رہی۔۔۔۔صبر بھی آگیا۔۔۔۔اس الزام پہ کیسے صبر کرتی۔۔۔۔۔اس بار اس کی عزت کو اچھالا گیا۔۔۔۔اس بار اس کے دل پہ چوٹ لگی تھی۔۔۔۔۔۔روح کو پاش پاش کر دیا گیا تھا۔۔۔۔۔۔۔راخیل کے تھپڑ تو بظاہر چہرے پہ نشان چھوڑ گئے تھے۔۔۔۔۔۔جو گہری چوٹیں نگین نے اور ماں جی نے اس کے دل پہ لگائی تھیں ان کے نشان وہ خود ہی محسوس کر رہی تھی۔۔۔۔۔۔۔یہ نشان اس کے آخری سانس تک اس کے ساتھ رہنے تھے۔۔۔۔۔۔۔

 

اس کا کردار داغ دار ہو گیا۔۔۔۔سسرال میں بنائی ہوئی عزت ایک لمحے میں بکھر گئی۔۔۔۔۔اس کے اندر کی سماریہ آج وفات پا گئی۔۔۔۔۔۔

دامن پہ لگے کس کس داغ کو مٹاتی۔۔۔۔۔سب کی نفرت کا شکار ہو گئی تھی۔۔۔۔سب کی نظروں میں آگئی۔۔۔۔۔محلے کی عورتیں بھی تھو تھو کرتیں۔۔۔۔۔۔۔

وہ میکے جانے کا سوچ بھی نہیں سکتی تھی۔۔۔۔کس منہ سے وہاں جاتی۔۔۔۔وہاں بھی بھابھیاں تھیں جن کا سامنا کرنا بہت مشکل تھا۔۔۔۔۔۔ماں باپ کو کیا منہ دکھاتی۔۔۔۔اس کی امی ہمیشہ کہا کرتی تھیں کہ ہمیشہ عورت کا قصور ہوتا ہے۔۔۔۔اگر عورت کی طرف سے ڈھیل نہ ہو تو مرد کبھی بھی عورت کو تنگ نہیں کرتا۔۔۔۔اور اگر کوئی الزام لگ جائے۔۔۔۔تو عورت نے کچھ نہ کچھ ضرور کیا ہوتا ہے۔۔۔۔۔بلاوجہ الزام نہیں لگ جاتے۔۔۔۔۔۔

 

نہ جانے امی ایسے کیوں کہتی تھیں۔۔۔۔۔

 

ہر گزرنے والے دن کے ساتھ میں جلا کر بھسم کی جاتی ہوں۔۔۔۔۔۔روز نیا جسم بنتا ہے ۔۔۔۔۔پھر اس پہ مٹی کا تیل ڈالا جاتا ہے۔۔۔۔۔پھر ماچس کی تیلی جلائی جاتی ہے اور مجھ پہ پھنیک کے مجھے آگ لگا دی جاتی ہے۔۔۔۔۔۔۔۔میں چیختی ہوں۔۔۔۔۔۔تڑپتی ہوں۔۔۔۔۔۔۔۔کراہتی ہوں۔۔۔۔۔اور آخر کار مجھے موت آ جاتی ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔اگلے دن جب آنکھ کھلتی ہے۔۔۔۔۔تو یہ دیکھ کر دکھ ہوتا ہے کہ میں پھر سے زندہ کی گئی ہوں۔۔۔۔۔وہی عوامل دہرائے جاتے ہیں اور موت کے گھاٹ اتار دیا جاتا ہے۔۔۔۔پھر سے تیل پھینک کر آگ لگا دی جاتی ہے۔۔۔میری چیخوں کی آواز گردونواح کے کسی کونے میں نہیں پہنچتی۔۔۔۔۔۔اور جہاں پہنچتی ہے وہ لوگ میری آوازوں سے کافی مخفوظ ہوتے ہیں۔۔۔لطف لیتے ہیں۔۔۔۔تماشا دیکھتے ہیں۔۔۔۔۔۔ہنستے ہیں۔۔۔۔۔میرا مزاق اڑاتے ہیں۔۔۔۔۔اور آخر میں میری لاش کو ٹھوکر بھی کچھ لوگ اہم فریضہ سمجھ کے لگا جاتے ہیں۔۔۔۔۔۔پھر اسی طرح بے شمار آنسوؤں کے ساتھ رو رو کر تڑپ تڑپ کر ختم ہو جاتی ہوں۔۔۔۔۔۔۔میرا جلا ہوا جسم میدان کے بیچ و بیچ پوری رات ۔۔۔۔۔۔۔کسی لاوارث لاش کی طرح بے سدھ اور بے جان پڑا رہتا ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔کسی کو احساس نہیں ہوتا کہ اس بوسیدہ ڈھیر کو اٹھائے اور دفنا دے۔۔۔۔۔۔۔۔۔پھر ایسا ہوتا ہے کہ جسم اگلے دن دوبارہ زندہ کر دیا جاتا ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔خود کو زندہ دیکھ کر مجھے تکلیف ہوتی ہے۔۔۔۔۔۔۔

 

دن کی پہلی تکلیف۔۔۔۔۔اپنے ہونے پہ افسردہ ہونا۔۔۔۔۔۔۔۔

 

لیکن اس ہونے کو دنیا عملی جامہ اپنے انداز سے پہناتی ہے۔۔۔۔۔۔۔۔

 

وہ اندھیرے میں بیٹھی اکیلی باتیں کر رہی تھی۔۔۔۔۔۔۔اس کے دماغ کے چاروں خانوں میں سے تین خانے شل ہوچکے تھے۔۔۔۔چوتھا خانہ خاموش تھا جو اسے پاگل نہ بننے پہ مجبور کر رہا تھا۔۔۔۔کتنا مجبور اور بے بس ہو جاتا ہے وہ شخص۔۔۔۔۔۔جو۔۔۔۔۔۔دنیا میں ہرطرف سے متنفر ہو جاتا ہے۔۔۔۔کائینات کا ذرہ ذرہ اس کا دشمن بن جاتا ہے۔۔۔۔۔۔کوئی اپنا نہیں لگتا۔۔۔۔دور دورتک کوئی امید نظر نہیں آتی۔۔۔۔۔ہر طرف اندھیرا ہی محسوس ہوتا ہے۔۔۔۔۔

 

اس کا دل چاہ رہا تھا خودکشی کر لے۔۔۔۔لیکن یہ عمل بھی کرنے سے قاصر تھی۔۔۔کہ خدا کی دی ہوئی حدود کو جانتی تھی۔۔۔۔۔۔

عزت بھی اب اس کے پاس نہیں تھی۔۔۔۔صرف یہ چھت بچی تھی جہاں وہ رہ رہی تھی۔۔۔۔۔۔اگر یہ چھت بھی چلی جاتی تو دو سال کا بچہ لے کر کہاں جاتی۔۔۔۔۔۔کون اپناتا۔۔۔۔۔۔۔۔۔اس چورنی کو۔۔۔۔۔اس بدکردار کو۔۔۔۔۔۔اس داغدار کو۔۔۔۔۔۔۔۔

کئی ایک لیبل اس کے ماتھے پہ لگ چکے تھے۔۔۔۔۔کسی ایک الزام سے بھی وہ راہ فرار حاصل نہیں کر سکتی تھی۔۔۔۔۔۔۔۔۔

 

آخر میں نے کیا گناہ کیا تھا۔۔۔۔مجھے کس گناہ کی اتنی سزا ملی ہے۔۔۔۔۔میں نے تو کبھی سوچا بھی نہیں تھا کہ سسرال اتنا بھیانک بھی ہو سکتا ہے۔۔۔۔۔

 

اندھیرے میں بیٹھی سماریہ نے اپنے بال کھولے اور اپنے چہرے کو نوچنے لگی۔۔۔۔۔میں بد کردار ہوں مجھے سنگسار کر دو۔۔۔۔۔۔۔اس نے دونوں ہاتھوں سے اپنے دونوں گالوں پہ تھپڑ مارنے شروع کر دئیے۔۔۔۔۔۔میں چور ہوں۔۔۔۔۔۔میں مکار ہوں۔۔۔۔۔۔مجھے مارو ۔۔۔۔۔۔مجھے مار ڈالو۔۔۔۔۔۔اس کا دماغ پھٹ رہا تھا۔۔۔۔ایسا لگ رہا تھا جیسے دماغ کے چاروں خانے چت ہو گئے۔۔۔۔۔۔اسی اثنی میں اس کا لال ،رومان رو پڑا ۔۔۔۔۔۔۔۔سماریہ نے ایک نظر اس بچے کی طرف دیکھا اور خود کو سنبھالا ۔۔۔۔۔۔۔اس کے دماغ کا ایک خانہ اپنی درست حالت میں آیا اوراس نے بچے کو گود میں اٹھا لیا۔۔۔۔۔۔۔

 

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

 

نگین کی شادی ایک بہت بڑے اور امیر گھر میں کی گئی۔۔۔۔۔ماں باپ اور بھائیوں کی اکلوتی لاڈلی بہن کو شہزادیوں کی طرح بیاہا گیا۔۔۔۔۔سماریہ کے لئے یہ سب سے بڑی خوشخبری تھی۔۔۔۔۔۔۔اسے لگتا تھاکہ اب وہ آذاد پنچھی کی طرح اپنے گھر میں سکون سے رہے گی۔۔۔۔۔۔

 

دن رات مجھ پہ نظر رکھنے والی چلی گئی امی ۔۔۔۔۔۔۔ہر وقت مجھ سے مقابلہ کرنے والی چلی گئی ہے۔۔۔۔۔آپ سوچ نہیں سکتیں کہ میں کتنی خوش ہوں۔۔۔۔۔۔۔

سماریہ نے خوشی سے جھومتے ہوئے اپنی امی کو فون پہ بتایا۔۔۔۔۔۔۔

 

سماریہ۔۔۔۔اب ایسی دعا کرو کہ وہ اپنے گھر میں خوش رہے۔۔۔۔کیونکہ اگر وہ اپنے گھر میں خوش نہ ہوئی تو وہ دوبارہ تمہارے سر پہ مونگ دلنے آ جائے گی۔۔۔۔۔۔۔

سماریہ کی امی نے اسے بہت پائیدار مشورہ دیا تھا۔۔۔۔۔ماں تھی۔۔۔ماؤں کے تجربے بھی گہرے ہوتے ہیں۔۔۔۔۔۔۔

 

یہ تو آپ ٹھیک کہتی ہیں۔۔۔۔۔۔لیکن امی۔۔۔جتنا اس نے مجھے ستایا ہے ۔۔۔۔۔میرا دل چاہتا ہے اسے بھی احساس ہو۔۔۔۔۔۔۔

 

نہیں بیٹی۔۔۔۔ایسی بات نہیں کرتے۔وہ اپنے گھر میں خوش رہے گی تو کبھی اس کا دھیان بھی تمہاری طرف نہیں آئے گا۔

 

ماں نے ہمیشہ کی طرح اسے مثبت نصیختیں کیں۔۔۔۔۔۔

 

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

 

نگین اپنے گھر میں بہت خوش تھی۔۔۔۔۔خوش کیسے نہ ہوتی۔۔۔۔۔پانچ بھائیوں کی طاقت داماد کو خود ہی خاموش کرادیتی ہے۔۔۔۔۔۔۔

ایک بیٹی کی شادی کرنے اور زیادہ بیٹیوں کا بوجھ سر سے اتارنے میں بڑا فرق ہوتا ہے۔۔۔۔تمام بھائیوں کی طرف سے سونے کے سیٹ اسے شادی پہ گفٹ ملے تھے۔۔۔۔۔۔جبکہ دوسرے نمبر والے بھائی عادل نے نگین کو گاڑی گفٹ کی۔۔۔۔ماں باپ نے اس کے حصے کی زمین بھی شادی پہ ہی گفٹ کے طور پہ دے دی۔۔۔۔۔۔۔

زیادہ بھائیوں کی اکلوتی بہنیں بھی کتنی خوش نصیب ہوتی ہیں ناں۔۔۔۔۔۔۔اس خوش نصیبی کو وہ اپنے ساتھ لے کر گئی تھی۔۔۔۔۔۔۔سماریہ اسےدیکھ کر اپنا ماضی یاد کرتی اور اس کی قسمت پہ رشک کرتی۔۔۔۔۔۔۔

 

کتنی خوش نصیب ہے نگین۔۔۔۔میری زندگی اجیرن کرنے کے باوجود بھی اپنی زندگی میں کتنی خوش ہے۔۔۔۔۔۔خوش قسمتی کو اپنے ساتھ لے کر گئی ہے۔۔۔۔۔۔میری تو بس یہی دعا ہےکہ اب یہاں نہ آئے۔۔۔۔وہیں سسرال میں وقت گزارے۔۔۔۔۔۔۔

 

سماریہ کی یہ دعا قبولیت کے مرحلے سے نہیں گزری تھی۔۔۔۔۔۔

 

نگین شادی کے بعد دو چار دن سسرال میں رہتی اور زیادہ دن میکے میں گزارتی۔۔۔۔۔شوہر کی طرف سے ہر طرح کی اجازت تھی۔۔۔۔اس کی طرف سے کوئی روک ٹوک نہیں تھی۔۔۔۔۔۔۔وہ اپنےگھر میں بہت خوش تھی لیکن اسے یہ خوشی راس نہیں تھی۔۔۔۔وہ تو اپنے ماں باپ اور بھائیوں کے ساتھ وقت گزارنا زیادہ پسند کرتی تھی۔۔۔۔۔۔۔۔اور ویسے بھی جن لڑکیوں کو بھابھیوں کی ٹوہ میں رہنے کی عادت ہو وہ کیسے اپنی عادت کو بھول سکتی ہیں۔۔۔۔۔۔

 

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

 

آ گئے آپ۔۔۔۔۔۔۔کہاں تھے آپ۔۔۔۔۔۔۔

سماریہ نے رات کے چار بجے شوہر کو اپنی عدالت میں کھڑا کر لیا۔۔۔۔آخر بیوی تھی رات بھر راخیل کا انتظار کرتی رہی تھی۔۔۔۔۔

 

امی کے پاس تھا یار۔۔۔۔۔۔۔۔

راخیل نے تھکے سے لہجے میں بتایا۔۔۔

 

راخیل وہ سب ٹھیک ہے۔۔۔لیکن امی آپ کو اب ہر روز اپنے پاس روک لیتی ہیں پوری رات آپ کو اپنے پاس بٹھا کے رکھتی ہیں۔۔۔۔اب آپ شادی شدہ ہیں رومان کب سے رو رہا تھا مجھے تھکا دیا اس نے۔۔۔۔۔آپ کمرے میں آجاتے تو اسے تھوڑی دیر اٹھا لیتے۔۔۔۔۔۔میں بھی سو لیتی تھوڑا سا۔۔۔۔۔۔۔

سماریہ نے اپنی تھکن کا اظہار بہت آسان لفظوں میں کیا تھا۔۔۔۔۔۔

 

اچھا چلو دن چڑھنے میں کچھ ہی وقت بچا ہے سو جاو اب۔۔۔۔۔۔راخیل نے بھی اس کی کسی بات کا غصہ کئے بغیر اسے سونے کا کہا۔۔۔۔تو رات بھر سے راخیل کی منتظر آنکھوں میں نیند کے ڈھیر لگ گئے۔۔۔۔۔۔

اسے معلوم ہی نہیں تھا کہ دروازے پہ نگین کان لگائے سب کچھ سن رہی ہے۔۔۔۔۔۔۔

 

۔۔۔۔۔۔۔۔

 

امی بات سنیں۔۔۔۔۔۔۔ادھر آئیں۔۔۔۔۔۔خبردار۔۔۔۔اگر آج کے بعد آپ نے راخیل بھائی کو اپنے پاس بٹھایا۔۔۔۔۔۔آج کے بعد راخیل بھائی آپ کا بیٹا نہیں۔۔۔۔۔

دن کے دو بجے نگین سو کر اٹھی تو ٹی وی لاؤنج میں کھڑی ہو کر اونچی آواز میں چلانے کےانداز میں بولنے لگی۔۔۔۔۔

سن رہی ہیں ناں آپ۔۔۔۔۔۔

 

کیا ہوا ہے نگین۔۔۔امی نے چونک کر نگین سے پوچھا۔۔۔۔

 

کچھ نہ پوچھیں امی۔۔۔۔یہ بہو۔۔۔۔۔بہو ہی ہوتی ہے۔۔۔۔کسی کی سگی نہیں ہوتی۔۔۔۔۔آپ کو پتا ہے سماریہ بھابھی نے ہمارے بھائی کو کیسے بھڑکایا ہے رات کو۔۔۔۔۔۔۔میں نے خود اپنے کانوں سے سنا۔۔۔۔۔یہ ہمارے بھائی کو ہمارے خلاف پٹیاں پڑھا رہی تھی۔۔۔۔۔اس نے کہا ماں کے پاس جا کر کیا کیا پروپگینڈے کرتے ہو۔۔۔۔۔امی۔۔۔۔کیا بیٹا اپنی ماں کے پاس نہیں بیٹھ سکتا۔۔۔۔آپ ہی بتائیں۔۔۔۔۔۔کیا ہوا جو رات بھر ہمارے پاس ہمارا بھائی بیٹھ جاتا ہے۔۔۔۔۔۔۔

نگین بولتی جا رہی تھی۔۔۔۔ماں اور باپ صوفے سے ٹیک لگائے سماریہ کو گھور رہےتھے۔۔۔۔ان کا نفرت سےگھورنا سماریہ کو بہت بھیانک لگ رہا تھا۔۔۔۔۔سماریہ کا سینہ چھلنی ہو رہا تھا۔۔۔۔وہ سب کچھ سنتی ہوئی اس بات پہ حیران تھی کہ نگین نے پرانی عادتیں نہیں چھوڑیں اور اتنی رات گئے اس کے کمرے کے باہر کھڑی میاں بیوی کی باتیں سنتی رہی۔۔۔۔۔۔۔

امی جی۔۔۔۔۔۔۔اس سماریہ بھابھی نے ہمارا بھائی ہم سے چھین لیا ہے۔۔۔۔۔۔یہ جو سامنے کھڑی بڑی پارسا لگ رہی ہے۔۔۔۔۔۔ یہ چڑیل ہے ۔۔۔۔ناگن ہے۔۔۔۔ہمارے گھر آگ لگا دی ہےاس عورت نے۔۔۔۔۔۔

نگین بولتی جا رہی تھی۔۔۔۔جبکہ سماریہ کے کانوں میں اس کا ایک ایک لفظ بجلی بن کے گر رہا تھا۔۔۔۔۔اسے سمجھ نہیں آ رہی تھی کہ اپنی صفائی میں کیا بولے۔۔۔۔کیونکہ راخیل سے اس نےرات کو دو چار ایسی باتیں کی تھیں۔۔۔۔۔اب وہ کیسے مکرتی۔۔۔۔۔۔اسے جھوٹ بولنا بھی نہیں آتا تھا۔۔۔۔۔۔

ہم اس کے خلاف پروپگنڈے کرتے ہیں امی۔۔۔۔۔۔اب اپنے بیٹےسے دور رہنا امی۔۔۔۔۔۔۔آج کے بعد اس بیٹے کو بلانا نہیں آپ نے۔۔۔۔۔۔نگین نے بہت زیادہ جزباتی ڈرامہ رچایا۔۔۔۔۔جو ماں باپ کو ٹھیس پہنچا رہا تھا۔۔۔۔۔سماریہ واقعی غلط ثابت ہوئی۔۔۔۔وہ ایک بار پھر سب کی نظروں میں گر گئی۔۔۔۔ایک بار پھر روح پاش پاش ہوئی۔۔۔۔۔آج ایک بار پھر نگین نے تاریخ دہرائی۔۔۔۔۔۔۔۔۔

 

سماریہ نے ساس سسر اور نند کے قدموں میں گر کر معافیاں مانگیں ۔۔۔۔۔لیکن اس بار اسے معافی نہیں ملی تھی۔۔۔۔۔۔۔نگین نے اس کے منہ پہ زور دار تھپڑ مار کر اسےنظروں سے دور ہو جانے کا کہا۔۔۔۔۔۔۔شام کو راخیل آیا تو اسے سارےواقعے کا علم ہوا۔۔۔۔۔۔

 

قصور تمہارا ہے سماریہ۔۔۔۔۔تم نے بھی تو آدھی رات کو مجھے کٹہرے میں کھڑا کر لیا تھا ناں۔۔۔۔چلو اب جو ہوا سو ہوا بھول جاؤ۔۔۔۔۔۔۔

 

راخیل نے سماریہ پہ الزام دھرا اور بات ختم کی۔۔۔۔۔۔جو تھپڑ ناحق نند نے اس کے منہ پہ مارا تھا وہ کسی گنتی میں شمار نہ ہوا۔۔۔۔۔۔جو معافیاں وہ صبح سے سب سے مانگ رہی تھی وہ کسی نے قبول ہی نہیں کیں تھی۔۔۔۔۔۔۔بلکہ نگین نے اسے دھکےدے کر گھر سے باہر بھی نکالا لیکن وہ دوبارہ خود ہی اندر آ گئی۔۔۔۔۔۔دو سال کا بچہ لے کر،لٹی پٹی،اجڑی ماں باپ کی دہلیز پہ نہیں جانا چاہتی تھی۔۔۔۔۔۔۔۔راخیل کو سب کچھ معلوم ہونے کے باوجود اس نے سماریہ کو قصور وار ٹھہرا دیا۔۔۔۔۔۔۔

وہ مرتی کیا نہ کرتی۔۔۔۔۔ایک بار پھر خاموش ہو گئی۔۔۔۔۔۔پھر ایسی خاموش ہوئی کہ اسے ہنسنا بولنا سب بھول گیا۔۔۔۔۔۔۔

نگین نے شادی کے بعد بھی اپنی عادتوں کو مظبوط بنائے رکھا۔۔۔۔۔۔۔وہ اپنی پیاس کچھ اس طرح سے بجھاتی تھی ۔۔۔۔۔بھابھی پہ ظلم کر کے اسے سکون ملتا تھا۔۔۔۔۔۔۔اور یہ سکون سسرال میں نہیں تھا۔۔۔۔۔وہاں ہر چیز اسے میسر تھی۔۔۔۔لیکن کس کی تاک میں رپتی۔۔۔۔وہاں کس پہ الزام لگاتی۔۔۔۔۔۔۔میکے آ کر بھابھی اسے ٹارگٹ لگتی اوروہ اپنے نشانے پکے کرتی۔۔۔۔۔۔۔

 

سماریہ کی سوچ غلط ثابت ہوئی۔۔۔۔۔اسے لگتا تھا کہ نگین کی شادی کے بعد اب وہ آزاد ہے۔۔۔۔مگر ایسا کچھ نہیں تھا۔۔۔یہ گھر بھائیوں سے زیادہ نگین کا تھا۔۔۔۔یہاں نگین کا راج چلتا تھا۔۔۔۔اس گھر اور اس گھر کے ہر فرد پہ نگین کا اختیار تھا۔۔۔۔۔یہ اختیار گھر والوں نے خود نگین کو دیا تھا۔۔۔۔۔۔۔

 

سماریہ سوایے کڑنے اور جلنے کے کچھ نہیں کرسکتی تھی۔۔۔۔ہر وقت جل جل کے اندر سے بھسم ہو چکی تھی۔۔۔۔۔۔اس کے اندر ایک آگ لگی رہتی تھی جو اسے ہر وقت جلاتی رہتی تھی۔۔۔۔۔جس انسان کی کوئی عزت نہ ہو۔۔۔۔جس انسان پہ کئی ایک الزامات اور تہمتیں لگی ہوں وہ انسان بھلاں کیسے سکون میں رہ سکتا ہے ۔۔ہر وقت کی ازیت سے وہ ڈپریشن کی مریضہ بن چکی تھی۔۔۔۔مگر کوئی نہیں جانتا تھا کہ اس کو کیا مسلہ ہے۔۔۔۔۔یہ تو صرف سماریہ ہی جانتی تھی۔۔۔۔

 

آؤ کبھی میری شاموں میں آکر دیکھو

کتنی پیاسی اور اجڑی بستی جیسی ہیں

میں نے کھوئی ہے اپنی عزت بھی وقار بھی

مجھے آگ بھی ہر روز لگائی جاتی ہے

اور سنگسار بھی کیا جاتا ہے

آؤ۔۔۔دیکھو اس ویران بدن کو

جسے بھسم بھی کیا جاتا ہے اور

ٹھوکریں بھی لگائی جاتی ہیں

یہ دکھ میرا کتنا گہرا ہے

یہ سمجھنے سے تم قاصر ہو

مجھے خود ہی معلوم ہے کہ

میں بدنام زمانہ اور رسوا سی

کس کس سزا کی مرتکب ہوئی

یہ صرف میں ہی جانتی ہوں

مجھے کہاں کہاں زخموں کے نشاں لگے

 

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔حتم شد۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

 



COMMENTS

Name

After Marriage Based,1,Age Difference Based,1,Armed Forces Based,1,Article,7,complete,2,Complete Novel,604,Contract Marriage,1,Doctor’s Based,1,Ebooks,9,Episodic,274,Feudal System Based,1,Forced Marriage Based Novels,4,Funny Romantic Based,1,Gangster Based,2,HeeR Zadi,1,Hero Boss Based,1,Hero Driver Based,1,Hero Police Officer,1,Horror Novel,2,Hostel Based Romantic,1,Isha Gill,1,Khoon Bha Based,2,Poetry,13,Rayeha Maryam,1,Razia Ahmad,1,Revenge Based,1,Romantic Novel,20,Rude Hero Base,3,Second Marriage Based,1,Short Story,65,youtube,30,
ltr
item
Urdu Novel Links: Aag By Tehniyat Guriya Short Story
Aag By Tehniyat Guriya Short Story
https://blogger.googleusercontent.com/img/b/R29vZ2xl/AVvXsEj9Abq1950VOyBrZuzy69p37jb3yiHyxXuBJZIKmhW2YdA25FOr87-fugLc3ue0hOy1ezlwPLQAzHmicd-PpHinuPU53_rMBBe1SAKJi4jCLjG7oJb3laZ5XPnyylbLn0m_Gqtjwg67asD8ClsZyPUBW5mnbgs2jJZuxSv2n0FkzdPDt7fELOgdqyJ5/w400-h400/299212184_549970726882444_6094007468963463033_n.jpg
https://blogger.googleusercontent.com/img/b/R29vZ2xl/AVvXsEj9Abq1950VOyBrZuzy69p37jb3yiHyxXuBJZIKmhW2YdA25FOr87-fugLc3ue0hOy1ezlwPLQAzHmicd-PpHinuPU53_rMBBe1SAKJi4jCLjG7oJb3laZ5XPnyylbLn0m_Gqtjwg67asD8ClsZyPUBW5mnbgs2jJZuxSv2n0FkzdPDt7fELOgdqyJ5/s72-w400-c-h400/299212184_549970726882444_6094007468963463033_n.jpg
Urdu Novel Links
https://www.urdunovellinks.com/2022/08/aag-by-tehniyat-guriya-short-story.html
https://www.urdunovellinks.com/
https://www.urdunovellinks.com/
https://www.urdunovellinks.com/2022/08/aag-by-tehniyat-guriya-short-story.html
true
392429665364731745
UTF-8
Loaded All Posts Not found any posts VIEW ALL Readmore Reply Cancel reply Delete By Home PAGES POSTS View All RECOMMENDED FOR YOU LABEL ARCHIVE SEARCH ALL POSTS Not found any post match with your request Back Home Sunday Monday Tuesday Wednesday Thursday Friday Saturday Sun Mon Tue Wed Thu Fri Sat January February March April May June July August September October November December Jan Feb Mar Apr May Jun Jul Aug Sep Oct Nov Dec just now 1 minute ago $$1$$ minutes ago 1 hour ago $$1$$ hours ago Yesterday $$1$$ days ago $$1$$ weeks ago more than 5 weeks ago Followers Follow THIS PREMIUM CONTENT IS LOCKED STEP 1: Share to a social network STEP 2: Click the link on your social network Copy All Code Select All Code All codes were copied to your clipboard Can not copy the codes / texts, please press [CTRL]+[C] (or CMD+C with Mac) to copy Table of Content