--> Inteqam By Ghazal Sheikh Noor Short Story | Urdu Novel Links

Inteqam By Ghazal Sheikh Noor Short Story

 Inteqam By Ghazal Sheikh Noor Short Story Novel Name :  Inteqam Author Name:  Ghazal Sheikh Noor Category :  Short Story Novel status :  Co...

 Inteqam By Ghazal Sheikh Noor Short Story

Novel Name : Inteqam
Author Name: Ghazal Sheikh Noor
Category : Short Story

Novel status : Complete

Novel description :

Assalam o Alaikum
Here is an awesome opportunity for all social media writers. If anyone is interested and want to publish their writings on our web then He / She can approach us through Email or our social media page.
knofficial9@gmail.com

whatsapp _ 0335 7500595

انتقام

غزل شیخ نور


کنول  سرخ لہنگے  میں بہت پیاری لگ رہی تھی ۔۔۔۔۔۔۔وه  تو  اپنی  شادی  کے  لیے  بہت  بہت  خوش  تھی  ۔۔۔۔۔آج  اس  کا  نکاح  تھا ۔۔۔۔۔۔ نکاح  خواں نے  نکاح  کے  کلمات پڑھے ۔۔۔۔۔۔

کنول  شہزادی  ولد عمر  آپ  کا   نکاح مدثر ولد احمد  سے  پانچ  لاکھ حق  مہر  طے پایا  ہے  کیا  آپ  کو  قبول  ہے ؟


قبول  ہے  ۔۔۔قبول  ہے  ۔۔۔۔۔۔قبول  ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔

نکاح  کے   بعد  باپ  کے  گلے  لگ  گئی ۔۔۔

مدثر کو  اس  کے  آنسو  بہت  بے  چین کر  رہے  تھے ۔۔۔کیو  کے  وه  اپنی  بیوی  کنول  کو  کنول  کا  پھول  بنا  کر  رکھنا  چاہتا  تھا ۔۔۔۔۔💖

رخصتی کے  بعدکنول اور مدثر گاڑی میں  بیٹھے ۔۔۔۔۔۔کنول مدثر کو  سوچ  سوچ  کر  بہت  اچھا  محسوس  کر  رہی  تھی 💗 اچانک ایک  کار  دوسری  کار  سے  ٹھکرا گئی . . .  فرنٹ سیٹ پر بیٹھے ہوئے دونوں درد  کی  وجہ  سے  بے ہوش  ہو  گے ۔۔۔۔۔دوسری  طرف  بھی  کار  سے   ٹکرانے والا  بھی  شدید زحمی  ہوا ۔۔۔۔وه  بھی  سڑک  کے  درمیان  میں  پڑھا  تھا ۔۔۔۔۔💖💖💖💖💖💖


ہیلّو  سر  آپ  کا  کام  ہو  گیا ۔۔۔۔۔۔اب  پتا  نہیں  کون  زندہ  ہے  اور کون  مر  گیا ۔۔۔۔۔۔۔۔

دوسری  طرف  سے  ایک  شخص کی  آواز آئی۔۔۔۔۔جیسا کہا  ہے  ویسا کرو ۔۔۔۔

اوکے  سر ۔۔💖💖💖💖💙💙💙💙💙💙💙💙💙💙💙💙

کنول  کو  جب  ہوش  آیا  وه  ایک  بند  کمرے  میں  بیڈ  پر  تھی  ۔۔۔۔۔۔کچھ  دیر  بعد  جب  اس  کی  نظر  اپنے لال  سوٹ  پر  پری ۔۔۔۔۔جلدی  جلدی    اٹھی مدثر ۔۔۔۔مدثر ۔۔۔۔کہ  کر  دروازے  کی  طرف  بھاگی ۔۔۔۔

کھولو  پلیز  کھول دو   ۔۔۔۔۔۔کون  ہو  تم  ۔۔۔۔۔۔۔۔

اچانک دروازہ  کھولا ۔۔۔۔۔۔۔۔تم ۔۔۔۔۔۔۔۔۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

ہا ...ہا ۔۔۔۔ہا مصطفیٰ  ہے  نام  میرا ۔۔۔۔۔۔۔تم  نے  مجھے  اپنی  اوقات  سے  بڑ  کر  تنگ  کیا ۔۔۔۔۔۔۔۔اور  دیکھو  نہ  تم  اب  میرے  پاس  ہو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

تم اپنے  آپ  کو  کیا  سمجتھے  ہو  ۔۔۔۔۔تم  مجھے  اس  لال  جوڑے  میں  دیکھ  رہے  ہو۔۔۔۔۔۔میں اب  کسی  کے  نکاح  میں  ہو ۔۔۔۔۔

مصطفیٰ  نے  زور  سے  اس  کا  منہ پکڑا۔۔۔۔۔۔تمہاری  ہمت  کیسے  ہوئی ۔۔میرے  اگے  زبان  چلانے کی ۔۔۔۔۔مصطفیٰ نے  اس  کے  بازو  سے  پکڑ  کر  زمین  پر  گرا  دیا ۔۔۔۔۔

اس  کا  سر  بیڈ  کے  ساتھ  جا کر  لگا ۔۔۔۔۔۔مصطفیٰ  سگریٹ  نکال  کر  سلگانے لگا ۔۔۔۔۔۔۔💞

اگلے  لمحے  کنول  کے  پاس زمین  پر  بیٹھا ۔۔۔۔۔میری  پیاری کنول  اس  وجہ سے  تم  نے  مجھے  برباد  کیا  ہے ۔۔۔۔۔

چٹاخ ۔۔۔۔۔

مصطفیٰ  نے  اس  کی  گال  پر  ایک  تھپیر رسیدہ  کیا ۔۔۔۔۔۔۔مصطفیٰ  کی  آنکھیں غصے سے  لال  تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔

مصطفیٰ   ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔تم  جو  مرضی  کر  لو  میں  اب  مدثر کی  ہو ۔۔۔۔۔۔۔افسوس  تم  پر ۔۔۔۔۔۔۔۔

مصطفیٰ نے  غصہ میں  کنول  کو  بالوں سے  پکڑ  لیا . .  ۔۔۔کنول  کی  چیخ  پورے  کمرے میں  گونج  رہی  تھی ۔۔۔۔۔۔اس  نے  پھر اس  کا  سر  بیڈ  سے  مارا۔۔۔۔۔اور  اب  وہا  سے  اٹھ  کر باہر کی  طرف  چلا  گیا ۔۔۔۔۔دروازہ  بند  کرنے  سے  پہلے  اس  نے  اونچی    آواز  میں کہا  ۔۔۔۔۔۔کنول  یہ  سزا  تم  نے  خود  اپنے  لیے  مقرر کی  ہے ۔۔۔۔۔۔اور  اب  اس  کمرے  میں بیٹھ کر  وه  وقت  یاد  کرو ۔۔۔۔۔۔ جو  کچھ  تم  نے  میرے  ساتھ  کیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔💖💖💖💖💖💖


ماضی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

مصطفیٰ اور  کنول  بچپن  کے  دوست  تھے ۔۔۔۔۔۔جیسے  جیسے  یہ  دونو  بڑے  ہوۓ  ان  کی  دوستی  پیار  میں  بدل  گئی ۔۔۔۔۔۔یہ  دونو   ایک  دوسرے  کے  بغیر رہ  نہیں  سکتے  تھے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ مصطفیٰ کے  گھر  پارٹی  تھی ۔۔۔۔۔۔سب  دوست  انجوۓ کر  رہے  تھے ۔۔۔۔۔۔آج  کنول  اس  پارٹی  کا  حصہ  نہیں  تھی ۔۔۔۔اس  نے  مصطفیٰ  کو  کال  کر  کے  کہا  تھا  کے  میں  آج  نہیں  اؤ  گی ۔۔۔۔۔سوری  ۔۔۔۔۔۔۔۔مجھے کام  ہے  کچھ ۔۔۔۔۔۔۔مصطفیٰ  بھی  اس  بات  پر  ناراض  ہوا۔۔۔اور  کال  بند  کر  دی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔

دوسری  طرف  انکار  کرنے  والی  کنول  اس  وقت  خود  شہزادی  لگ  رہی  تھی ۔۔۔۔۔۔وه  خود  کو  شیشے  میں  دیکھ  کر  بڑ بڑی ۔۔۔۔۔۔کے  مصطفیٰ  تمہاری  کنول  آ  رہی  ہے ۔۔۔۔بس  میرے ہونے  والے  ہمسفر  تم  کو  تنگ  کرنے  کا  بہت  مزہ  آتا  ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔وه  جلدی  سے  امی  ابو  کو  اللہ  حافظ  کہ کر  نکل  پڑی۔۔۔۔۔۔۔💖💖💖💖💖💖💖مصطفیٰ کے  گھر  میں  جب  کنول  انٹر  ہوئی ۔۔۔۔۔۔تو  اس کی پاؤں کے  نیچے  سے  زمین  نکل  گئی ۔۔۔۔۔جلدی  سے اس نے میوزک  بند  کیا ۔۔۔۔۔سب  ڈانس  میں  مصروف  تھے ۔۔۔۔۔وہا  اب  سناٹا  ہو  گیا ۔۔کنول  تالی  مارتے  مارتے  مصطفیٰ  کے  پاس  گئی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔

کنول  تم ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔؟

کنول  نے  مصطفیٰ  کے  منہ پر  تھپڑ مارا ۔۔۔۔۔۔۔سہی  کہتے  تھے  پاپا  تم  جیسے  امیر  لوگو  کا کام  یہ  ہے  ۔۔۔۔۔کوئی  بھی  موقع  ہاتھ  سے  جانے  نہیں  دیتے ۔۔۔۔۔۔عشق کی  باتیں مجھے  سے  اور  ڈانس  کسی  اور  سے ۔۔۔۔۔۔۔کنول  اس کے  قریب  ہوئی ۔۔۔۔اور  اس  کی  آنکھوں میں  ایک  دفع  دیکھا ۔۔۔جو  نشہ  کرنے  سے  لال  ہو  چکی  تھی ۔۔۔۔اگلے  لمحے  اس  نے  مصطفیٰ  کو  پیچھے  کو  دھکا دیا ۔۔۔

Listen be careful mustafa........

آج  کے  بعد  اگر  تم  نے  مجھے بلایا یا  میرے  راستے  میں  آۓ ۔۔۔۔تو  میں  تم  کو  جان  سے  مار دو  گی ۔۔۔۔۔۔۔اتنا  کہتی  وه  وہا  سے  چل  پڑھی ۔۔۔۔۔۔۔۔

Stop kanwal plz stop.......


وه  اس  کے  پیچھے  بھاگتا گیا ۔۔۔۔۔۔پلیز ایسا کچھ  نہیں  ہے ۔۔۔۔میں  تم  سے  سچی  محبّت کرتا  ہو......وه  ایک  پل روکھی   ۔۔۔۔۔۔۔دور  ہو  ۔۔۔۔شرابی  مجھے  سے ۔۔۔۔۔۔۔یہ  کہتی  ہوئی  کار  میں  بیٹھ گئی ۔۔۔۔۔۔ .

اس  کے  یہ  لفظ  اس  کو  بہت  تکلیف  دے  گے ۔۔۔۔کہیں راتیں وه  سو  نہیں  پایا ۔۔۔۔۔اس  کے  کانو میں  کنول  کی  آواز  گونجتی  رہتی  تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔😥😥😥😥😥😥😥

ایک  وقت  تھا  کے  مصطفیٰ  کنول  کے  الفاظ  کو  بلا  نہیں  پاتا  تھا ۔۔۔۔۔لیکن  آج  وه  اپنا  ماضی  یاد  کر  کے  رو  رہی  تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔دروازہ  پھر  سے  کھولا ۔۔۔۔۔۔۔مصطفیٰ  پھر سے  چلتا  ہوا     آیا ۔۔۔۔۔۔اور  کنول  کے  سامنے  صوفہ  پر  بیٹھ گیا ۔۔۔۔۔۔۔۔اور  ڈرنک  کرنے  لگ  پڑھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اور  اونچی آواز  سے  بولنے  لگا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

💖💖💖💖دور ہو  مجھے  سے  ۔۔۔۔۔شرابی ۔💕💕💕💕💕💕شرابی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

کنول  اس  کے  پاس  آئی ...تم  ہو  شرابی ۔۔۔۔۔اس  لیے  تو  آج  مجھے  یہاں  لے  کر  آۓ۔۔۔۔تم  جیسے  نہ  مرد  ہوتے  ہے  جو  ایسے کسی  کی  بیوی  کو  اغواہ کر  لیتے  ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔

 

یو بیچ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔مصطفیٰ نے  گلاس  زور  سے  دیوار  میں  دے  مارا  ۔۔۔۔۔۔

وه  اٹھ  کھڑا  ہوا ۔۔۔۔۔اور وه  کنول  کی  طرف  جھکا۔۔۔۔۔۔۔

 

یو  بیچ ۔۔۔۔۔۔۔۔مصطفیٰ نے گلاس  زور  سے  دیوار  میں  دے مارا ۔۔۔۔۔۔۔۔

وه  اٹھ کھڑا  ہوا  اور  وه  کنول  کی  طرف جھکا۔۔۔۔۔۔۔۔اور اس  کی کمر   کو  اپنی  گرفت میں  لیتے  ہوے  ہونٹوں پر  لگی  لال  لپ سٹک  کو  اپنے  ہاتھ   کی  انگلیوں  سے  صاف  کرنے  لگا ۔۔۔۔۔۔کنول  نے  خود کو  اس  کی  گرفت سے  آزاد  کرنا  چاہا ۔۔۔۔لیکن  اس  سے  اپنی  گرفت اور مضبوط کر  لی ۔۔۔۔۔۔مصطفیٰ  نے  اس  کے  کان  میں  سر  گوشی  کی ۔۔۔کنول  دھوکہ باز  کیسا لگ  رہا  ہے  اس  شرابی  کی  باہوں میں  آ  کر ۔۔۔۔۔۔۔مصطفیٰ  یہ  کہتا  ہوا ۔۔۔۔جلدی  سے  پیچھے  ہٹ  گیا ۔۔۔۔اواو  مجھے  تو  اب  یاد  آیا  ۔۔۔۔تم  تو  کسی  غیرت  مند کی  بیوی  ہو ۔۔۔۔۔سوری ۔۔۔۔۔۔

وه  چلاتی  ہوئی  اگے  بڑی ۔۔۔۔۔۔اور  مصطفیٰ  پر  ہاتھ  اٹھانا چاہا  ۔۔۔۔۔لیکن  نہ کام  رہی ۔۔۔۔۔۔۔

مصطفیٰ  نے  اس  کا  ہاتھ  پکڑ  کر  جٹ  سے  نیچے  کیا  ۔۔۔اس  دن  میں  نے  تمھارا  تھپڑ برداشت  کر  لیا  تھا ۔۔۔۔اب  نہیں  ۔۔۔۔تم  نے  سب  دوستوں کے  سامنے  مجھے  ذلیل  کیا  تھا اب  تم  دیکھو  انتظار  کرو  اپنی  بھی  بربادی  کا ۔۔۔

وه  یہ کہتا  ہوا  تيزی  سے  باہر  کی  طرف  بڑ  گیا ۔۔۔۔۔۔۔۔اور  دروازہ  بند  کر  دیا ۔۔۔۔۔۔۔

کنول  وہاں بیٹھ کر  زور قطار رونے لگی ۔۔۔۔۔۔مصطفیٰ  روم  سے  باہر کھڑا تھا ۔۔۔۔    زور  زور  سے  رونے کی آواز سے  اس  کے  دل  میں  ایک  درد  سا  ہوا ۔۔۔۔۔۔اور  اس  کی  آنکھ  سے  اشک نکل  آۓ۔۔۔۔۔اس  نے  دل  میں  سوچا  ۔۔۔۔نہیں  نہیں  اب  میں  اس  کو  مکمل  برباد  کر  کے  سانس  لو  گا ۔۔۔۔اس  نے  میری  بچپن  کی  محبّت  کو سرے عام بد نام  کیا  تھا  ۔۔۔۔اب  نہیں ۔۔۔ان  سوچو  میں گم  اس  کی  فون  کی  گھنٹی بجی ۔۔۔۔۔۔۔ہاں بولو ۔۔۔۔۔۔

سر  دونو آدمی  بے ہوش  ہوے  تھے ۔۔۔۔اب  وه  ٹھیک ہے ۔۔۔۔۔۔

چلو  سہی  ہے ۔۔۔۔پیسے میں  سینڈ  کر  دیتا  ہو ۔۔۔اب  اس  شہر  میں  نظر  نہ  آنا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔💕💕💕💕💕رات  کے  بارہ کا  ٹائم ہو  گیا ۔۔۔۔مدثر اور   عمر صاحب  نے  سب   ہسپتال  سب  جگہ  دیکھ  لیا  پر  کنول  کا  کچھ  پتا  نہ  چلا ۔۔۔۔۔مایوس  ہو  کر  گھر  واپس  آۓ ۔۔۔۔

😳😳😳😳😳

مصطفیٰ  جو  صوفہ  پر  سو  گیا  تھا  ۔۔۔۔جب  اس  کی  شراب کا  نشہ  کچھ  کم  ہوا ۔۔۔۔اپنی   نظر  گھڑی پر  ڈالی . .  رات  کا  ایک  بج  گیا  تھا ۔۔۔۔۔۔

O shit..............

اتنا  ٹائم ہو  گیا ۔۔۔۔۔مجھے  پتا  بھی  نہیں  چلا ۔۔۔۔۔وه  جلدی سے  کچن  سے کھانا  گرم  کر  کے  کنول  کے  روم  کا  لاک  کھولنے  لگا ۔۔۔۔۔دروازے کی  آواز  سن  کر  کنول  جلدی سے  اٹھ کھڑی ہوئی  ۔۔۔۔۔مصطفیٰ  روم  میں  انٹر  ہوا  اور  کھانے  کو  سائیڈ  ٹیبل  پر  رکھ  کر  اس سے  کہنے  لگا  ۔۔۔۔۔لو  کھا  لو  . . .  سوری  مجھے  دھیان نہیں  رہا  کے  اتنا  ٹائم ہو  گیا ۔۔۔۔۔وه  بولتا  بولتا  صوفہ پر   بیٹھ گیا  اور  سگریٹ  کے  کش لگانے  لگا ۔۔۔۔۔

کنول  جو  کھڑی تھی  اگلے  لمحے  چل  کر  مصطفیٰ  کے  پاس  آئی۔۔

مصطفیٰ  یہ  دیکھو میرے  ہاتھوں کی  طرف  ۔۔۔۔۔۔مجھے  پلیز  گھر  چھوڑ  آؤ ۔۔۔میں  تم  سے  معافی  مانگتی  ہو .  میں  اب  کسی  کی  بیوی  ہو ۔۔۔۔۔۔تم  مجھے  چھوڑ  دو  پلیز ۔۔۔۔۔

مصطفیٰ  نے  اپنے  لب  غصہ سے  بیج لیے  اور اٹھ  کھڑا  ہوا ۔۔۔۔۔۔۔

تم  اگر  چاہتی  ہو  کے  میں  تم  کو  گھر  چھوڑ  اؤ  ۔۔۔۔تو  صرف  ایک  کام  کرو  میرا ۔۔۔۔۔وه  الماری کی  طرف  بڑھا۔۔۔لو  یہ  کپڑے  پہن لو ۔۔۔اور  کھانا  کھا  لو ۔۔۔۔۔۔۔۔ رات  بہت ہو  گئی  ہے  میں  صبح  چھوڑ  اؤ  گا۔۔۔۔۔۔۔اور  ڈرو  مت ۔۔۔میں  شرابی ضرور  ہو  پر  تمھارے  ساتھ  بلکل  کوئی  ایسی ویسی حرکت  نہیں  کرو  گا ۔۔۔۔۔اس نے  ہاتھ  سے  اشارہ کرتے  ہوے  واش  روم  کا  راستہ  بتایا  ۔۔۔۔۔۔۔کنول  نے  شاپنگ بیگ  پکڑا ۔۔۔۔اور  واش  روم  کی  طرف  بڑھ گئی ۔۔۔۔۔

مصطفیٰ  کی  نظر  جب  کنول  پر  پڑھی ۔۔۔۔وه  سہمی  سہمی  پہلے  والی  کنول  لگ  رہی  تھی ۔۔۔بہت  سکون  محسوس  کر  رہا  تھا  وه ۔۔۔۔۔۔جب  کنول  نے  کھانے کی  پلٹ اپنے  ہاتھ  میں  لی  . .  تو  اس  کے  ہاتھو  پر  لگی لال  مہدی  پر نظر  پڑھی ۔۔۔۔۔مصطفیٰ  کی  آنکھیں  جسیے انگارے برسا رہی  ہو ۔۔۔۔۔۔اس  کو  پھر  سے  کنول  کی  دی  ہوئی  اذیت یاد  آ  گئی ۔۔۔۔۔وه  غصہ کو  کنٹرول  کرتا  ہوا  کمرے  سے باہر  چلا  گیا ۔۔۔۔۔۔۔💓💓💓💓💓💓

صبح  کے  دس  بج  گے ۔۔۔۔کنول  کب  سے  مصطفیٰ  کا  انتظار  کر  رہی  تھی ۔۔۔اچانک دروازہ  کھولا ۔۔۔۔۔۔اور  کنول  اپنے  شوہر اور  بابا  کو  آتی  دیکھ  کر  بہت  خوش  ہوئی ۔۔۔۔کنول  اپنے  باپ  کے  گلے  سے  لگی ۔۔۔۔پر  اس  کے  باپ  نے  کنول  کو  اپنے  سے  الگ  کر  کے  ایک  زور  کا  تھپڑ اس  کے  منہ پر  مارا ۔۔۔۔۔تم  جسیی بیٹی  کو  تو  بیٹی  کہتے شرم  آ  رہی  ہے ۔۔۔۔۔اگر  تم  کو  اس مصطفیٰ  سے  محبّت  تھی  تو  کم  از  کم  مجھے  اتنا  ذلیل  نہ  کرواتی ۔۔۔۔پاپا  ایسا کچھ  نہیں  ہے ۔۔۔۔مصطفیٰ  بولو  تم  بتاؤ ۔۔۔۔۔

وه  روتی  ہوئی  مدثر کے  پاس  آئی ۔۔۔۔آپ  تو  یقین کر  لے ۔۔۔۔۔مدثر بولا۔۔۔۔

کیا  یقین کرو ۔۔۔۔تمہارا ۔۔۔یقین تو  تب  کرتا  ۔۔۔۔جب  اس  وقت  تم  لہنگے میں  ہوتی ۔۔۔۔میں  مدثر اپنے  ہوش  ہواز میں  تم کو  طلاق  دیتا  ہو ۔۔طلاق  دیتا  ہو  طلاق  دیتا  ہو ۔۔۔۔۔۔وه  یہ  کہتا  ہوا  وہا سے  چلا  گیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔

کنول  کے  پاپا  بھی  وہا  سے جا  چکے  تھے ۔۔۔۔۔۔۔

کنول  جو  زمین  پر  پھوٹ  پھوٹ  کر  رو  رہی  تھی ۔۔۔۔۔مصطفیٰ  اس  کے  پاس  آیا ۔۔۔۔۔اور  کہنے  لگا  ۔۔۔۔جو  تم  نے  کیا  آج  میں  نے  تم  سے  اس  کا  انتقام لے  لیا  ۔۔۔۔اٹھو اب  ۔۔۔۔۔نکلو  یہاں  سے ۔۔۔۔۔

میرا  ہاتھ  چھوڑو  مصطفیٰ ۔۔۔۔۔۔مصطفیٰ ۔۔۔۔

مصطفیٰ  نے  اس  کو  گھر  کے  گیٹ سے  باہر نکال  کر  اس  کے  منہ پر  یہ  کہتے  دروازہ  بند  کر  دیا  کے  میں  شرابی ہو ۔۔۔۔۔۔۔تمھاری عزت  کا  محافظ کیسے  ہو  سکتا ہو  بلا ؟؟؟؟؟؟؟؟؟💕💕💕💕💕💕💕💕

حتم شدہ

 

 




COMMENTS

Name

After Marriage Based,1,Age Difference Based,1,Armed Forces Based,1,Article,7,complete,2,Complete Novel,631,Contract Marriage,1,Doctor’s Based,1,Ebooks,10,Episodic,278,Feudal System Based,1,Forced Marriage Based Novels,4,Funny Romantic Based,1,Gangster Based,2,HeeR Zadi,1,Hero Boss Based,1,Hero Driver Based,1,Hero Police Officer,1,Horror Novel,2,Hostel Based Romantic,1,Isha Gill,1,Khoon Bha Based,2,Poetry,13,Rayeha Maryam,1,Razia Ahmad,1,Revenge Based,1,Romantic Novel,22,Rude Hero Base,3,Second Marriage Based,1,Short Story,68,youtube,33,
ltr
item
Urdu Novel Links: Inteqam By Ghazal Sheikh Noor Short Story
Inteqam By Ghazal Sheikh Noor Short Story
https://blogger.googleusercontent.com/img/b/R29vZ2xl/AVvXsEgV7JeaqakJvYY5Weog1mv8gONt7u-J1c-Ch30KtyyweI-7oTnyK_wqcYZLM6PRL4jViaBj56UMX2Zel97kvYquRT449Bc_ohxF4cOMpXRJQUm1n3QtHsSlW0KcajLJvuqAZILCwPkXpGNadzNf37S-LkaoTmE-XHIEciV-Ae6rZqZAUMK6ZqFDYUu_Vw/w380-h400/inteqam.jpg
https://blogger.googleusercontent.com/img/b/R29vZ2xl/AVvXsEgV7JeaqakJvYY5Weog1mv8gONt7u-J1c-Ch30KtyyweI-7oTnyK_wqcYZLM6PRL4jViaBj56UMX2Zel97kvYquRT449Bc_ohxF4cOMpXRJQUm1n3QtHsSlW0KcajLJvuqAZILCwPkXpGNadzNf37S-LkaoTmE-XHIEciV-Ae6rZqZAUMK6ZqFDYUu_Vw/s72-w380-c-h400/inteqam.jpg
Urdu Novel Links
https://www.urdunovellinks.com/2022/10/inteqam-by-ghazal-sheikh-noor-short.html
https://www.urdunovellinks.com/
https://www.urdunovellinks.com/
https://www.urdunovellinks.com/2022/10/inteqam-by-ghazal-sheikh-noor-short.html
true
392429665364731745
UTF-8
Loaded All Posts Not found any posts VIEW ALL Readmore Reply Cancel reply Delete By Home PAGES POSTS View All RECOMMENDED FOR YOU LABEL ARCHIVE SEARCH ALL POSTS Not found any post match with your request Back Home Sunday Monday Tuesday Wednesday Thursday Friday Saturday Sun Mon Tue Wed Thu Fri Sat January February March April May June July August September October November December Jan Feb Mar Apr May Jun Jul Aug Sep Oct Nov Dec just now 1 minute ago $$1$$ minutes ago 1 hour ago $$1$$ hours ago Yesterday $$1$$ days ago $$1$$ weeks ago more than 5 weeks ago Followers Follow THIS PREMIUM CONTENT IS LOCKED STEP 1: Share to a social network STEP 2: Click the link on your social network Copy All Code Select All Code All codes were copied to your clipboard Can not copy the codes / texts, please press [CTRL]+[C] (or CMD+C with Mac) to copy Table of Content