--> Piya Main Teri By Husn E Kanwal Episode 2 Read Online | Urdu Novel Links

Piya Main Teri By Husn E Kanwal Episode 2 Read Online

 Piya Main Teri By Husn E Kanwal Episode 2 Read Online پیا میں تیری حُسنِ کنول قسط نمبر 2- ” تم؟؟۔۔۔“وہ ابھی سامان لے کر گھر سے نکلی ہی تھی ...

 Piya Main Teri By Husn E Kanwal Episode 2 Read Online



پیا میں تیری

حُسنِ کنول

قسط نمبر 2-

تم؟؟۔۔۔“وہ ابھی سامان لے کر گھر سے نکلی ہی تھی کے سامنے زارون کو کھڑا دیکھ چونکی۔۔۔۔

ہاں میں۔۔۔کیوں ؟؟۔۔۔کسی اور کا انتظار تھا آپ کو؟؟“وہ ابرو اچکاتے ہوۓ۔۔۔۔تفتیشی افسران کی طرح پوچھنے لگا۔۔۔۔

زیادہ اسمارٹ مت بنو۔۔۔۔یہ بتاٶ ۔۔۔آفس سے چھٹی کیوں لی ؟؟۔۔۔منع کیا تھا میں نے “وہ جانتی تھی اس طرح سوالات پوچھ کر وہ اپنی غلطی کور کر رہا ہے۔۔۔جس کے سبب وہ برہم انداز میں دونوں ہاتھ فولٹ کرتے ہوۓ۔۔۔استفسار کرنے لگی۔۔۔۔

یار۔۔۔مجھ سے رہا نہیں گیا۔۔۔“وہ دنیا جہاں کی معصومیت چہرے پر سجاۓ گویا ہوا۔۔۔

مقابل کی آنکھوں میں محبت جھلک رہی تھی۔۔۔وہ کیسے نظرانداز کردیتی اپنی خفگی میں۔۔۔۔اس لیے مزید کوٸی بحث نہ کی۔۔۔وہ جانتی تھی بہت مشکل ہونے والا یہ ایک ہفتہ۔۔۔۔

اس سے بات کیے بغیر ایک دن گزارنا مشکل ہے ۔۔۔۔پھر یہاں تو بات پورے ایک ہفتے کی تھی۔۔۔

وہ خود بھی خوشی و غمی کی ملی جھلی کیفیت سے دوچار تھی۔۔۔۔

خوشی کے اتنے سالوں بعد اپنی ماں اور خاندان والوں سے ملے گی۔۔۔۔۔

غم فقط اتنا ۔۔۔۔کے سامنے کھڑے اس خوبرو نوجوان کو ایک ہفتے تک دیکھ نہیں سکے گی۔۔۔۔۔

کیا ہوا؟؟۔۔۔۔۔کچھ زیادہ ہی خوبصورت لگ رہا ہوں کیا آج ؟؟“وہ اس کی آنکھوں میں ابھرتی محبت کو بھاپ گیا تھا۔۔۔اس لیے شوخی سے۔۔۔ اس کے قریب آکر استفسار کرنے لگا۔۔۔۔

بندر لگ رہے ہو پورے۔۔۔“اس کی شوخ نگاہیں پڑھتے ہی۔۔۔وہ تیزی سے اپنے چہرے کے تاثرات بدل گٸ تھی۔۔۔۔۔منہ بسور کر کہتی ہوٸی ۔۔۔۔اپنے چہرے پر آنے والی آوارا لٹ کو پھونک مار کر ۔۔۔اک ادا سے اتراتے ہوۓ ۔۔۔۔برابر سے گزر کر لفٹ کی جانب بڑھنے لگی۔۔۔۔۔

وہ اس کی انھی دلفریب اداٶں پر ہی تو اپنی جان وارتا تھا۔۔۔۔

مسکراتے ہوۓ ۔۔۔سر جھٹک کر۔۔۔۔سوٹ کیس کا ہینڈل پکڑ کر کھیچنے لگا۔۔۔۔

پورے راستے۔۔۔ بس اسکے وجود کو ہی دیوانوں کی طرح تکتا رہا۔۔۔۔

چلو اپنا خیال رکھنا۔۔۔۔پتا نہیں کیوں یار۔۔۔میرا دل ابھی بھی مطمئن نہیں ہے تمھیں وہاں بھیجنے پر۔۔۔“وہ اٸیرپورٹ کے ویٹنگ روم میں اس کا ہاتھ پکڑ کر فکرمند لہجے میں کہنے لگا۔۔۔۔۔

پتا نہیں کیوں۔۔۔مگر دل تو نجمہ کا بھی بہت اداس ہورہا تھا۔۔۔۔۔۔

ایک انجان سہ خطرہ محسوس کررہی تھی وہ۔۔۔۔۔مگر زارون سے اس کا ذکر نہ کیا۔۔۔۔

کیونکے وہ واقف تھی پھر زارون جانے نہیں دے گا۔۔۔چاہے وہ کتنی ہی ضد کرلے۔۔۔۔

ارے بابا۔۔۔۔پھر شروع مت ہوجانا۔۔۔۔۔مسکراتے ہوۓ وادع دو مجھے۔۔۔تاکے مسکراتی ہوٸی ہی تمھیں واپس اسی اٸیرپورٹ پر ایک ہفتے بعد ملوں۔۔۔۔“وہ بڑی محبت سے زارون سے وداع لینے لگی۔۔۔۔۔

ویسے وہ محیب کہاں ہے؟؟۔۔۔“زارون پورے روم میں نظر دوڑاتے ہوۓ استفسار کرنے لگا۔۔۔۔

پتا نہیں۔۔۔۔اگر وہ نہ آۓ تو ہی اچھا ہے۔۔۔میں اکیلے زیادہ کمفرٹیبل فیل کرٶں گی۔۔۔۔“نجمہ نے بےنیازی سے کہا۔۔۔۔۔۔

چلو اللہ حافظ۔۔۔“زارون نے مسکراتے ہوۓ وداع لی۔۔۔۔

دل نہیں چاہ رہا تھا اس کا ہاتھ چھوڑنے کا۔۔۔۔

وہ دو تین ثانیوں کے لیے اسکے حسین سراپے کو آنکھوں میں خاموش کھڑا بساتا رہا۔۔۔۔۔۔

کیا؟؟۔۔۔“اس کی نگاہوں کی تپش نجمہ کو جھیپنے پر مجبور کررہی تھی۔۔۔۔وہ نظریں جھکاۓ ۔۔۔مسکراتے ہوۓ ٹوکنے لگی۔۔۔

کچھ نہیں۔۔۔اپنا خیال رکھنا۔۔۔۔یاد رکھنا میری نجمہ تمھارے پاس امانت ہے۔۔۔۔“اس کے الفاظ اسکے دل کی سچی محبت کی ترجمانی کررہے تھے۔۔۔۔۔بتارہے تھے کتنی الفت ہے اسے۔۔۔۔۔

وہ اثبات میں سرہلانے لگی۔۔۔

اللہ حافظ۔۔۔ اپنا بھی بہت خیال رکھنا۔۔۔۔اور میرے پیچھے کلب جانے کی سوچنا بھی مت۔۔۔۔مسڑ زارون یاد رکھیے گا۔۔۔۔۔میں نے اپنے جاسوس آپ کے پیچھے سے ہٹاٸیں نہیں ہیں ابھی۔۔۔۔“وہ خاصہ جتاتے ہوۓ۔۔۔تنبیہہ کرنے لگی۔۔۔۔

جی جی یاد ہے مجھے۔۔۔ویسے بھی وہ دونوں مجھے اپنے کم اور تمھارے والدین زیادہ لگتے ہیں۔۔“وہ منہ بگاڑتے ہوۓ۔۔۔خود پر مظلومیت ظاہر کرتے ہوۓ گویا ہوا۔۔۔۔

جس پر وہ مسکرانے لگی۔۔۔۔

اس کا آہستگی سے ہاتھ چھوڑنا۔۔۔جیسے نجمہ کی آنکھوں میں ہی رہ گیا تھا۔۔۔۔۔

اسے جاتا دیکھ آنکھوں میں نمی اتر آٸی۔۔۔۔یہ پہلی بار تھا جب وہ اس سے دور جارہی تھی۔۔۔

***-----*****

وہ کانوں پر ہینڈ فری ۔۔۔اور نظریں سیل پر جماۓ دنیا سے لاپرواہ ۔۔اپنی ہی دھن میں مگن تھی۔۔۔کے اچانک اسے اپنے پاس رکھے سفید رنگ کے صوفے پر کوٸی بیٹھتا ہوا محسوس ہوا۔۔۔اس نے نظر تیزی سے اس شخص کی جانب اٹھاٸی۔۔۔

سفید سوہٹر پر بلیک رنگ کا کوٹ اور جنیز پہنے ایک نہایت وجیہہ مرد اس کی نگاہ کے سامنے پُروقار انداز میں بیٹھا ہوا نظر آیا۔۔۔

وہ محیب تھا یہ نجمہ نے پہلی ہی نگاہ اس پر ڈالتے ہی جان لیا تھا۔۔۔۔

اسے اتنے سالوں بعد پہلی ہی نظر میں پہچان لینے کی وجہ اس کی خوبصورتی نہیں تھی۔۔۔بلکے اس کی سیدھی ابرو پر لگا وہ کٹ کا نشان تھا جو بچپن میں اسنے ہی دیا تھا۔۔۔۔

وہ نشان اسے اپنی سالوں پرانی فتح یاد دلا گیا تھا۔۔۔جس پر وہ آج بھی دل ہی دل خوش ہوٸی تھی۔۔۔۔

وہ الگ بات تھی یہی فتح ۔۔۔اتنے سالوں سے اسکی ماں سے جداٸی کا سبب بنی تھی۔۔۔۔

پہلی ہی نگاہ میں نجمہ نے اسے دیکھ ۔۔دل ہی دل اعتراف کیا تھا کے کمبخت بڑا ہی حسین ہے۔۔۔۔

اس کی نگاہوں کی تپش نے محیب کو آگاہ کیا کے مقابل اسے ستاٸشی نگاہوں سے تک رہی ہے۔۔۔۔

جس پر اس نے ایک بےنیازی سی نگاہ سامنے بیٹھی خوبصورت لڑکی پر ڈالی۔۔۔۔جو سفید رنگ کی شرٹ اور بلیک جینز میں ملبوس تھی۔۔۔۔اس کی گھنی سیاہ زلفیں کمر کو مکمل ڈھانکے ہوۓ تھیں۔۔۔کانوں میں ہینڈ فری لگاۓ۔۔۔وہ اسکی جانب دیکھ رہی تھی۔۔۔۔

دودھیاٸی رنگت پر ۔۔۔ لاٸٹ پنک میک۔اپ کیے وہ کسی پری سے کم معلوم نہیں ہورہی تھی۔۔۔۔۔

میری کافی اب تک کیوں نہیں آئی؟؟“وہ اپنی سیکرٹری سے متوجہ ہوکر ۔۔۔اپنے مغرور انداز میں استفسار کرنے لگا۔۔۔۔

سر۔۔۔۔دو منٹ پلیز۔۔۔“نجمہ نے اسکی سیکرٹری کی جانب دیکھا۔۔۔۔جو نہایت حسین و جمیل اور مغربی لباس میں ملبوس تھی۔۔۔۔محیب کی سیکرٹری لچکدار انداز میں کہ کر وہاں سے تیزی سے چلی گٸ۔۔

کمرے میں مکمل خاموشی چھاٸی رہی۔۔۔۔۔

دس سال بعد ملے تھے وہ دونوں کزنز۔۔۔۔مگر آنکھوں میں دونوں کے ہی سواۓ کدورت کے کوٸی اور جذبہ نہ تھا۔۔۔۔

محیب اپنے سیل میں کسی سے میسج پر بات کرنے میں مگن تھا۔۔۔۔

ناجانے کیوں اس کی موجودگی ہر پرانے زخم کو تازہ کررہی تھی۔۔۔۔جیسے پوری زندگی فلم کی طرح آنکھوں کے سامنے چلنے لگی

میں نجمہ۔۔۔۔۔۔ملک جیسے امیر و کبیر خاندان کی اکلوتی پوتی۔۔۔۔مگر مجھے اور میری ماں کو کبھی اس خاندان نے قبول نہیں کیا۔۔۔۔کیونکے میری ماں ماضی میں ایک ناچ گانا کرنے والی عورت تھی۔۔۔۔۔میرے مرحوم ڈیڈ کو وہ ایک پارٹی میں ملی تھیں۔۔۔۔میری مام کبھی بھی ناچ گانے والی نہیں بننا چاہتی تھیں۔۔۔۔کون سی عورت چاہتی ہے؟؟۔۔۔۔وہ ایک ساٸبان کی تلاش میں تھیں۔۔۔۔بتایا تھا انھوں نے مجھے۔۔۔۔کتنی دعائيں کیا کرتی تھیں وہ اس دلدل سے نکلنے کی۔۔۔۔۔مگر وقت و حالات ان کے مخالف سمت کھڑے تھے۔۔۔۔وہ چاہ کر بھی ایک مدت تک اس دلدل سے نہ نکل سکیں۔۔۔۔پھر ایک دن جیسے کوٸی کرشمہ ہوا۔۔۔۔ان کی ملاقات میرے ڈیڈ سے ایک رنگین پارٹی میں ہوٸی۔۔۔۔میری مام بہت خوبصورت تھیں۔۔۔۔اتنی کے نظریں نہیں ٹہرتیں تھیں ان پر۔۔اس رات ان کی پہلی بار بولی لگنی تھی۔۔۔۔۔ڈیڈ کا دل آگیا ان پر۔۔۔۔ ۔۔۔۔سب سے اونچی بولی لگا کر انھیں ایک رات کے لٸے خریدا۔۔۔۔وہ ملک کے امیر و کبیر آدمی اور ایک سیاست دان گھرانے سے تعلق رکھتے تھے۔۔۔۔۔میری مام گندی نہیں تھیں۔۔۔۔بالکل بھی نہیں۔۔۔۔بس مجبور تھیں۔۔۔۔مام بہت ڈر گٸیں تھیں۔۔۔۔انھیں زبردستی ڈیڈ کے فارم ہاوس پہنچایا گیا۔۔۔ڈیڈ کے کمرے میں آتے ہی انھوں نے خود کو بچانے کے لیے ساٸیڈ ٹیبل پر رکھے لمپ سے ان کے سر پر وار کرنا چاہا۔۔۔۔ڈیڈ کافی پھرتیلے تھے۔۔۔وہ نہ صرف خود کو بچانے میں کامیاب ہوۓ بلکے دو تین لمحوں میں ہی انھوں نے مام کو زمین پر زیر کردیا۔۔۔۔اس لمحے میری مام بےبسی کے عالم میں چیخ کر کہنے لگیں۔۔۔۔

(میں صرف ناچ گانا کرتی ہوں۔۔۔میں نے کبھی کسی غیر مرد کو خود کو چھونے نہیں دیا۔۔۔۔۔پلیز۔۔۔۔اللہ کے واسطے مجھے چھوڑ دیں ۔۔۔۔۔یا پھر نکاح کریں۔۔۔۔ورنہ میں یہیں خود کشی کرلوں گی۔۔۔۔مگر اپنے وجود کو آپ کو حرام طریقے سے چھونے نہیں دوں گی۔۔۔)....ڈیڈ ہکا بکا ہوکر انھیں دیکھنے لگے۔۔۔۔۔ان کی آنکھوں میں سچاٸی تھی۔۔۔۔۔یہ دیکھ وہ ان سے دور ہٹ کر کھڑے ہوگٸے۔۔۔۔۔

کون جانتا تھا کے عبدالرحمان ملک جیسے مرد کو ایک ناچنے والی اتنی اچھی و پاکیزہ لگے گی۔۔۔۔کے وہ اسے نکاح کے مقدس رشتے میں باندھنے کے لیے تیار ہوجاٸیں گے۔۔۔۔۔

انھوں نے اسی رات فارم ہاوس پر ہی گواہوں کی موجودگی میں میری مام سے نکاح کیا۔۔۔ساتھ ساتھ انھیں زندگی بھر تحفظ دینے کا وعدہ بھی۔۔۔۔۔

میرے ڈیڈ بڑے ہی نڈر قسم کے مرد تھے۔۔۔دوسرے ہی دن میری مام کو ۔۔۔(جو دنیا کی نظر میں ایک ناچنے والی وحشیہ تھی) لے کر ملک مینشن پہنچ گٸے۔۔۔۔۔۔

دادا بہت ناراض ہوۓ۔۔۔۔۔دادی نے ان کا نکاح قبول کرنے سے ہی انکار کردیا۔۔۔۔۔

ڈیڈ کو گھر سے نکال دیا گیا۔۔۔۔۔

مگر اس سب کے باوجود انھوں نے مام کا ساتھ نہیں چھوڑا۔۔۔۔ایک چٹان کی طرح ان کے اور باہری دنیا کے سامنے کھڑے ہوگٸے۔۔۔۔۔

ایک کمپنی میں جاب کی ۔۔۔۔اور کراۓ کے مکان میں رہنے لگے۔۔۔

ان کی زندگی بہت خوشحال گزر رہی تھی۔۔۔

کے پھر ایک دن میرے دادا کے انتقال کی خبر ڈیڈ تک پہنچی۔۔۔۔۔

ڈیڈ مام کو لے کر ان کے جنازے پر گٸے۔۔۔۔۔

دادی نے صاف کہا۔۔۔۔کے انھیں تو ملک مینشن میں آنے دیں گی۔۔۔مگر میری مام کو نہیں۔۔۔۔۔

ڈیڈ اس وقت بہت مجبوری کی حالت میں تھے۔۔۔۔اپنے باپ کے جنازے کو کندھا دینا چاہتے تھے۔۔۔۔

اس لیے مام کو ڈرائیور کے ساتھ واپس گھر بھیج دیا۔۔۔۔

مام اس وقت پریگننٹ تھیں۔۔۔۔

ڈیڈ ایک ماہ تک واپس نہیں آۓ۔۔۔۔۔نہ ہی کوٸی کانٹیک کیا۔۔۔

مام کے پاس سیل فون نہیں تھا۔۔۔۔

مام بہت پریشان ہوگٸیں تھیں۔۔۔۔پیسے بھی ختم ہورہے تھے۔۔۔۔

اب انھیں یہ خیال ستانے لگا تھا کے ڈیڈ نے انھیں چھوڑ دیا ہے۔۔۔۔

وہ دن رات جاۓنماز پر بیٹھی روتی رہتیں۔۔۔۔

بڑی مجبوری کے عالم میں انھوں نے ملک مینشن جانے کی ہمت کی۔۔۔۔

دادی اور بڑی امی نے انھیں ملک مینشن کی دہلیز پار نہیں کرنے دی۔۔۔۔

میری مام دروازے پر ہی چیخ چیخ کر ڈیڈ کا نام پکارنے لگیں۔۔۔۔

تب دادی نے ان پر ایک ہولناک انکشاف کیا۔۔۔۔جس نے میری مام کے پاٶں کے نیچے سے زمین نکال دی۔۔۔۔

وہ تھا میرے ڈیڈ کی اچانک موت کا۔۔۔۔۔

مام کو یقین نہیں آیا۔۔۔۔کے ان پر قیامت آکر گزر گٸ ۔۔اور انھیں خبر ہی نہ ہوٸی۔۔۔۔۔۔

ان کا ساٸبان اب نہ رہا۔۔۔۔۔

وہ اسی لمحے غش کھاکر گرگٸیں۔۔۔۔

جب آنکھ کھلی تو وہ ایک بڑے سے خوبصورت کمرے کے بیڈ پر تھیں۔۔۔۔

اس کمرے کی دیواروں پر میرے ڈیڈ کی تصویریں لگی تھیں۔۔۔۔جنھیں دیکھ مام پھوٹ پھوٹ کر رونے لگیں۔۔۔۔۔

مام کہاں جاتیں؟؟؟۔۔۔۔مکان کا کرایہ تک دینے کے پیسے نہیں تھے ان کے پاس۔۔۔۔۔

انھوں نے میری دادی (رقیہ بیگم )کے پاٶں میں گر کر ملک مینشن میں رہنے کی بھیک مانگی ۔۔۔۔۔

مام کو خوش فہمی ہوٸی کے اس بوڑھی خاتون کو ان پر ترس آگیا۔۔۔۔جبکے اصل میں تو انھیں موقع مل گیا تھا اپنی ساری بھڑاس نکالنے کا۔۔۔۔۔

وہ پریگننٹسی کی حالت میں بھی میری مام سے نوکرانیوں کی طرح کام لیتیں۔۔۔۔

اور صرف وہی کیوں۔۔۔۔ملک مینشن کے تمام ہی افراد میری مام کو ایک نوکرانی کی طرح ٹریٹ کرتے۔۔۔۔۔

جس پر وہ بیچاری کچھ نہ کہتیں۔۔۔صرف رات میں بیٹھ کر روتی رہتیں۔۔۔۔

پھر میں پیدا ہوٸی۔۔۔۔۔

میری اور محیب کی دشمنی اسی دن سے شروع ہوٸی۔۔۔۔

وہ مجھ سے پورے دس سال بڑا تھا۔۔۔۔

میں نہیں جانتی کیوں۔۔۔مگر محیب مجھ سے سخت نفرت کرتا تھا۔۔۔۔اور باقی گھر کے افراد بھی۔۔۔۔۔سواۓ جازع کے۔۔۔۔۔

"محیب " اور "جازع " میرے بڑے ابو کے بیٹے۔۔۔۔

دونوں بھاٸی۔۔۔مگر مزاج میں زمین و آسمان کا فرق۔۔۔۔۔

جاری ہے

 



COMMENTS

Name

After Marriage Based,1,Age Difference Based,1,Armed Forces Based,1,Article,7,complete,2,Complete Novel,605,Contract Marriage,1,Doctor’s Based,1,Ebooks,9,Episodic,274,Feudal System Based,1,Forced Marriage Based Novels,5,Funny Romantic Based,1,Gangster Based,2,HeeR Zadi,1,Hero Boss Based,1,Hero Driver Based,1,Hero Police Officer,1,Horror Novel,2,Hostel Based Romantic,1,Isha Gill,1,Khoon Bha Based,2,Poetry,13,Rayeha Maryam,1,Razia Ahmad,1,Revenge Based,1,Romantic Novel,20,Rude Hero Base,3,Second Marriage Based,1,Short Story,65,youtube,30,
ltr
item
Urdu Novel Links: Piya Main Teri By Husn E Kanwal Episode 2 Read Online
Piya Main Teri By Husn E Kanwal Episode 2 Read Online
https://blogger.googleusercontent.com/img/b/R29vZ2xl/AVvXsEgDbuxFDeYyaG0n5FlR86C9vJ_yrknDh3kFCD_CNCPZA5gnyXVW3CK-DRH7Qx0sb9NNZJc_X9d8i5Xjp1oLnXxkP1FPAoSR1RB3DRB2F59UAdQeFGtvUyIP7fsr5pAVahCtEfQtR2M_GAykPA89v9Y4YU85O9nVw-CimY2Se5-vtGDWPejYj7AU2uy5Qw/w400-h275/Piya%20Main%20Teri%20By%20Husn%20E%20Kanwal%20Episode%201.jpg
https://blogger.googleusercontent.com/img/b/R29vZ2xl/AVvXsEgDbuxFDeYyaG0n5FlR86C9vJ_yrknDh3kFCD_CNCPZA5gnyXVW3CK-DRH7Qx0sb9NNZJc_X9d8i5Xjp1oLnXxkP1FPAoSR1RB3DRB2F59UAdQeFGtvUyIP7fsr5pAVahCtEfQtR2M_GAykPA89v9Y4YU85O9nVw-CimY2Se5-vtGDWPejYj7AU2uy5Qw/s72-w400-c-h275/Piya%20Main%20Teri%20By%20Husn%20E%20Kanwal%20Episode%201.jpg
Urdu Novel Links
https://www.urdunovellinks.com/2022/08/piya-main-teri-by-husn-e-kanwal-episode_15.html
https://www.urdunovellinks.com/
https://www.urdunovellinks.com/
https://www.urdunovellinks.com/2022/08/piya-main-teri-by-husn-e-kanwal-episode_15.html
true
392429665364731745
UTF-8
Loaded All Posts Not found any posts VIEW ALL Readmore Reply Cancel reply Delete By Home PAGES POSTS View All RECOMMENDED FOR YOU LABEL ARCHIVE SEARCH ALL POSTS Not found any post match with your request Back Home Sunday Monday Tuesday Wednesday Thursday Friday Saturday Sun Mon Tue Wed Thu Fri Sat January February March April May June July August September October November December Jan Feb Mar Apr May Jun Jul Aug Sep Oct Nov Dec just now 1 minute ago $$1$$ minutes ago 1 hour ago $$1$$ hours ago Yesterday $$1$$ days ago $$1$$ weeks ago more than 5 weeks ago Followers Follow THIS PREMIUM CONTENT IS LOCKED STEP 1: Share to a social network STEP 2: Click the link on your social network Copy All Code Select All Code All codes were copied to your clipboard Can not copy the codes / texts, please press [CTRL]+[C] (or CMD+C with Mac) to copy Table of Content